گوگل پلے اسٹور میں وائرس کا انکشاف….کیسے بچا جا سکتا ہے ؟


نیویارک(ویب ڈیسک)سائبر کرائم اور انٹرنیٹ پر ہیکنگ سے متعلق تحقیقات کرنے والی ایک امریکی ملٹی نیشنل کمپنی نے انکشاف کیا ہے کہ گوگل پلے اسٹور میں وائرس موجود ہے۔غیرملکی خبررساں ادارے نے بتایاکہ چیک پوائنٹ سافٹ ویئر ٹیکنالوجی نامی کمپنی کے مطابق گوگل پلے اسٹور میں نومبر 2016 میں وائرس چھوڑا گیا۔کمپنی نے اپنے بلاگ میں بتایا کہ فالس گائیڈ نامی وائرس گوگل پلے اسٹور میں موجود کم سے 40 موبائل ایپلی کیشنز میں موجود ہے، جس سے لاکھوں صارفین اور ڈیوائسز متاثر ہوچکے۔کمپنی نے دعوی کیا کہ فالس گائیڈ نامی وائرس سے اب تک دنیا بھر میں 6 لاکھ ڈیوائسز اور 20 لاکھ صارفین متاثر ہوئے ہیں۔چیک پوائنٹ کے مطابق فالس گائیڈ نامی وائرس گیمنگ اور گائیڈ ایپلی کیشنز میں موجود ہے۔جیسے ہی ایسی ایپلی کیشنز کو ڈاون لوڈ کیا جاتا ہے تو وائرس ڈاون لوڈنگ سے ملتی جلتی تفصیلات طلب کرتا ہے، جس سے صارفین سمجھتے ہیں کہ یہ ایپلی کیشن کی ضروریات ہیں، تاہم درحقیقت وہ وائرس ہی ہوتا ہے۔دوسری جانب برطانوی میڈیا نے بتایا کہ پلے اسٹور میں وائرس کی موجودگی کے انکشاف کے بعد گوگل نے وائرس کو ہٹادیا ہے۔امریکی ادارے نے اپنی رپورٹ میں یہ نہیں بتایا کہ اس وائرس سے کتنے اور کون سے ممالک متاثر ہوئے۔

سب سے زیادہ پڑھی جانے والی مقبول خبریں


دلچسپ و عجیب
کالم
آپ کی رائے
   پاکستان       انٹر نیشنل          کھیل         شوبز          بزنس          سائنس و ٹیکنالوجی         دلچسپ و عجیب         صحت        کالم     
Copyright © 2016 All Rights Reserved