تازہ تر ین

راﺅ انوار کے سہولت کاروں کا پتہ چلا کر رہیں گے،سخت کا روائی ہو گی

اسلام آباد(اے این این ) جعلی پولیس مقابلے میں مارے جانے والے شہری نقیب اللہ قتل کیس کی سماعت کے دوران چیف جسٹس نے ریمارکس دیے ہیں کہ اگر مفرور ملزم راو¿ انوار عدالت میں پیش ہوجائیں تو بچ جائیں گے۔چیف جسٹس آف اکستان جسٹس میاں ثاقب نثار کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے تین رکنی بینچ نے مختصر سماعت کی۔عدالت نے آئی جی سندھ کو دوپہر ڈیڑھ بجے ان کیمرہ بریفنگ دینے کی ہدایت کرتے ہوئے سماعت میں وقفہ کردیا۔سماعت شروع ہوئی تو چیف جسٹس نے آئی جی سندھ سے استفسار کیا کہ راو¿ انوار کو ایئرپورٹ پر کس نے سہولت دی اور کس نے ان کے پاس ایشو کیے جس پر انہوں نے بتایا کہ ایئرپورٹ پر نجی ایئرلائن کے بورڈنگ پاس جاری ہوئے۔چیف جسٹس نے کہا کہ اگر معلوم ہوا کہ راو¿ انوار کا کوئی سہولت کار ہے تو سخت کارروائی ہوگی، ملزم عدالت میں پیش ہوجائے تو بچ جائے گا، عدالت نہ آنے کی صورت میں انہیں کسی دوسری جگہ سے تحفظ نہیں ملے گا۔عدالت راو¿ انوار کے سہولت کاروں کا پتہ لگا کر رہے گی اور انھیں عدالت کو جواب دہ ہونا پڑے گا۔عدالت نے نجی ایئرلائن کے متعلقہ حکام کو بھی طلب کرتے ہوئے سماعت میں وقفہ کردیا۔چیف جسٹس نے آئی جی سندھ کو کہا کہ سی سی ٹی وی فوٹیج پر بریفنگ کے لئے تیار ہیں جس پر انہوں نے کہا کہ میں تیار ہوں، چیف جسٹس نے کہا کہ ڈیڑھ بجے ہمیں ان کیمرہ بریفنگ دیں۔ چیف جسٹس نے گورنر اسٹیٹ بینک سے استفسار کیا کہ راو¿ انوار کے بینک اکاو¿نٹس منجمد کردیے اور کیا ان کی تنخواہ اکاو¿نٹ میں آرہی ہے جس پر گورنر اسٹیٹ بینک نے بتایا کہ ملزم کے 2 بینک اکاو¿نٹس تھے جنہیں منجمد کردیا گیا ہے جب کہ ان کی تنخواہ آرہی ہے لیکن وہ نکلوا نہیں سکتے۔کراچی رجسٹری میں ہونے والی گزشتہ سماعت پر عدالت نے مفرور راو¿ انوار کی گرفتاری کے لیے 2 دن کی مہلت دیتے ہوئے آئی جی سندھ کو رپورٹ جمع کرانے کا حکم دیا تھا۔آئی جی سندھ نے عدالت کو یقین دہانی کرائی تھی کہ ملزم کے بیرون ملک فرار ہونے کے شواہد نہیں ملے اور آئندہ 2 سے تین روز میں پیش رفت ہوگی جس پر عدالت نے انہیں 2 روز کی مہلت دیتے ہوئے آج رپورٹ طلب کی تھی۔رواں ماہ 13 جنوری کو ملیر کے علاقے شاہ لطیف ٹان میں سابق ایس ایس پی ملیر راو¿ انوار نے نوجوان نقیب اللہ محسود کو دیگر 3 افراد کے ہمراہ دہشت گرد قرار دے کر مقابلے میں مار دیا تھا۔بعدازاں 27 سالہ نوجوان نقیب محسود کے سوشل میڈیا اکاو¿نٹ پر اس کی تصاویر اور فنکارانہ مصروفیات کے باعث سوشل میڈیا پر خوب لے دے ہوئی اور پاکستانی میڈیا نے بھی اسے ہاتھوں ہاتھ لیا۔پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے اس معاملے پر آواز اٹھائی اور وزیر داخلہ سندھ کو انکوائری کا حکم دیا۔تحقیقاتی کمیٹی کی جانب سے ابتدائی رپورٹ میں راو¿ انوار کو معطل کرنے کی سفارش کے بعد انہیں عہدے سے ہٹا کر نام ای سی ایل میں شامل کردیا گیا، جبکہ چیف جسٹس آف پاکستان کی جانب سے اس معاملے پر لیے گئے ازخود نوٹس کی سماعت جاری ہے۔

 


سب سے زیادہ پڑھی جانے والی مقبول خبریں




دلچسپ و عجیب
کالم
آپ کی رائے
   پاکستان       انٹر نیشنل          کھیل         شوبز          بزنس          سائنس و ٹیکنالوجی         دلچسپ و عجیب         صحت        کالم     
Copyright © 2016 All Rights Reserved