تازہ تر ین

نواز شریف کو تکبر لے ڈوبا

خدا یار خان چنڑ …. بہاولپور سے
بچپن سے لے کر آج تک یہی سنتے آئے ہیں اللہ تعالیٰ کی بارگاہ میں دیرتو ہوسکتی ہے لیکن اندھیر نہیں، کیونکہ اللہ تعالیٰ انسان کو پورا پورا موقع دیتا ہے کہ انسان درندگی سے واپس انسانیت کی طر ف آجائے۔ جب انسان سرکشی کی ساری حدیں عبورکرجاتا ہے تواپنے آپ کو زمینی خدا سمجھنے لگتا ہے ۔ مخلوق خدا کوکیڑے مکوڑے اورخود کو اعلیٰ مخلوق سمجھے اورتمام انسانوں کے نصیب اور مقدر اپنے ہاتھوں سے لکھنا شروع کردے ۔جب ظالم کو ظلم کرنے میں خوشی محسوس ہو ، جب کسی شخص کو چوری، ڈکیتی ، منافقت ، ظلم ، غداری اورتکبر میں راحت محسوس ہو تو سمجھ لو خدا اُس سے ناراض ہے۔ اس لئے کہ اُس شخص کا دل اتنا کالا ہوجاتا ہے کہ اُس میںاچھے برے ، ظالم مظلوم کی تمیز ہی ختم ہوجاتی ہے ۔اپنے ذاتی مفاد کے علاوہ اُسے کچھ نظر نہیں آتا۔ وہ خدا کے تمام احکامات سے ٹکراﺅ پیدا کرنے لگتا ہے، اپنی طاقت کے بل بوتے پر خداکو بھول کر انسانیت کی تذلیل کرتا ہے ۔اللہ تعالیٰ کو اپنی مخلوق سے بے حد پیار ہے، وہ ہر چیز برداشت کرتا ہے مگر کوئی شخص زمینی خدائی کا دعویٰ کر کے انسانیت کی تذلیل اور مخلوق خدا کیلئے ناسور بن جائے تو وہ ظاہری طور پرانسانی شکل میں ہوتا ہے ،باطنی طورپر جہاں جہاں اُس کا بس چلتا ہے وہ درندگی کرتا ہے، وہ انسانی روپ میں درندہ ہوتا ہے۔ پھر اُس کو ملک ، قوم سے کوئی سروکار نہیں ہوتا،ہر وقت اپنے شکار کی گھات میں رہتا ہے ،پھر ایک ایسا وقت آتا ہے کہ اُس شخص کے دل میں خدا کا خوف ختم ہوجاتا ہے، جب خدا کا خوف ختم ہوجاتا ہے پھر وہ شخص تکبر میں آکر خود کو ہرفیصلے پر قادر سمجھ لیتا ہے، اُس وقت انسان کا زوال شروع ہوجاتا ہے کیونکہ تکبر، غرور،بڑائی تو صرف اللہ تعالیٰ کے پاس ہے، انسان کے پاس تو عاجزی ، انکساری ہے جو شخص عاجزی ، انکساری میں رہتا ہے اُس کا مطلب ہے کہ اُس کاخدا اُس پر راضی ہوتا ہے۔جو خدا کی حقیقت کو اپنانے کی کوشش کرتا ہے، تکبر کی شکل میں خدا سے اپنا تعلق ختم کرلیتا ہے۔ جب خدا کسی سے ناراض ہوجاتا ہے تو سب سے پہلے گھر والے اُس سے ناراض ہوجاتے ہیں، پھر آہستہ آہستہ اُس کے دوست ناراض ہوجاتے ہیں۔ جس طاقت کے باعث وہ تکبر پر اُترتا ہے پھر وہ طاقت اُس سے چھین لی جاتی ہے۔ اُس کے اپنے ہی منہ سے ایسے الفاظ نکلتے ہیں جو اُس کے زوال کا باعث بنتے ہیں۔ پھر انسان بے یار ومددگار ہوجاتا ہے ۔نواز شریف کے ساتھ بھی کچھ ایسا ہی ہورہا ہے۔ گھر میں بھائی کے ساتھ اختلافات اورباہر اُس کے قریبی ساتھی اُسے چھوڑ کر جارہے ہیں۔اب نواز شریف کو لوگوں کی بددُعائیں لے ڈوبیں گی۔نواز شریف جو کام بھی کرتا ہے، سیدھا کرنے کی کوشش کرتا ہے اور وہ اُلٹا ہوجاتا ہے۔ اب اُس کو چاروں طرف سے اندھیرا ہی اندھیرا نظر آنا شرو ع ہوگیا ہے۔ اب اُس کا دل اتنا کالا ہوچکا ہے کہ خداسے معافی ،تلافی اور توبہ کرنے کی بجائے امریکہ اور اسرائیلی ایجنڈے پر کام کرنا شروع کردیا ہے ۔
نواز شریف موجودہ دور کا میر جعفر ہے، ملک دشمن بیان دے کر ریاستی اداروں کو تباہ کر نے پر تُل گیا ہے۔ نواز شریف کااصل مکروہ چہرہ عوام کے سامنے کھل کر آگیا ہے۔ اب اپنی کرپشن کی بچانے کے لئے سب کچھ ملیا میٹ کردینا چاہتا ہے۔ پاکستان معرض وجود آنے کے بعد یہ پہلا پارٹی لیڈر ہے جو دشمن کی زبان بول رہا ہے۔ جب تک نواز شریف وزیر اعظم تھا اُس وقت اپنی زبان کیوں نہیں کھولی ،اب اچانک اپنے یار مودی کی زبان بولنے لگ گیا ہے ۔اب نواز شریف کے ناپاک ارادے عوام کے سامنے کھل کر آگئے ہیں۔ پہلے توصرف یہ نعرہ لگتا تھا”مودی کاجو یار ہے، ملک کا غدار ہے “اللہ پاک معاف کرے، ہر شخص کو برے وقت سے بچائے، اب تو سوشل میڈیاپر نوازشریف کوگالی گلوچ جو لعن تعن ہورہی ہے ،آج تک کسی لیڈر کے ساتھ نہیں ہوئی ۔ نواز شریف کے اس غدارانہ بیان کے بعد لوگ اس کی کرپشن کو بھی بھول گئے ہیں۔لوگوں کے اندر اس کے خلاف اتنا غم وغصہ پایا جاتا ہے ۔اب عوام کہتے ہیں لوٹی ہوئی ملکی دولت تو برداشت کرلیں گے مگر اب ملک کی سا لمیت کو نقصان پہنچانے والے کوبرداشت نہیں کریں گے۔
اب جو ظاہری حالات نظر آرہے ہیں، نواز شریف کا عوام کے سامنے آنا بہت مشکل ہوجائے گا ۔کوئی بھی بڑا واقع رونما ہوسکتا ہے، پہلے سیاہی پھینکی گئی ،ان کو سمجھ نہیں آئی۔پھر نواز کو جوتا مارا گیااُن کو پھر بھی سمجھ نہیں آئی ۔پھر احسن اقبال پر گولی چلائی گئی اب بھی ان کو سمجھ نہیں آئی۔ خدارا! نوازشریف کو چاہیے اب عوام کا سامنا نہ کرے، اس لئے کہ عوام کے اندر اس کے خلاف بہت زیادہ غصہ موجود ہے ،کچھ بھی ا نہونی ہوسکتی ہے اب ہر محب وطن پاکستانی نواز شریف کو ملک دشمن سمجھ رہا ہے کیونکہ انہوں نے ممبئی واقعہ کے حوالے سے جو انٹر ویو دیا ہے وہ انتہائی غیر ذمہ دارانہ اور ملک دشمن بیان ہے۔ اب قوم سمجھ گئی ہے کہ وہ انٹرنیشنل اسٹیبلثمنٹ کے اشاروں پر چل رہا ہے، وہ باہر کی ملک دشمن ایجنسیوں کا آلہ کار بن کر پاکستان کو نقصان پہنچانا چاہتا ہے ۔ پاکستانی عدالتوں ، پاکستانی سیاسی ڈھانچے ، پاکستانی اداروں، فوج اور اسٹیبلشمنٹ کو انڈرپریشرکرناچاہتا ہے۔ اس بیان سے پہلے وہ دھمکیاں بھی دے چکا ہے، تین مئی کو احتساب عدالت کے باہر نواز شریف نے واقعی کہہ دیا تھا کہ تمام ادارے ہوش کے ناخن لیں، اگر کام اسی طرح چلتا رہا تویہ ملک بھی نہیں چل سکے گاآپ میری بات مان لیں ورنہ میرے پاس بہت راز ہیں، افشاں کرنے سے پہلے سُدھر جائیں ۔ نواز شریف اپنا منہ کالا کرنے سے پہلے دھمکی دے چکے ہیں۔
نواز شریف کی اتنی چھوٹی سوچ پر افسوس ہوتا ہے کہ اپنے اقتدار اورکرپشن کوبچانے کی خاطر اس حدتک گرسکتا ہے اور پوری دنیا میں پاکستان کو بدنام کرنے پر تلا ہوا ہے ۔ یہ کسی عام آدمی کا یہ بیان نہیںبلکہ اس کاہے جو پاکستان کاتین بار وزیر اعظم رہ چکا ہے۔ اُس کااپنے ملک کے خلاف بیان تاریخ میں بھی نہیں ملے گا ۔نواز شریف کے اس بیان سے پوری دنیا میں پاکستان کو مشکوک نگاہوں سے دیکھا جارہا ہے۔ بھارت پاکستا ن کا دشمن ہے ،بھارت کے تمام چینل سارا سارا دن اس بیان پر تبصرہ کر کے ہائی لائٹ کررہے ہیں کہ پاکستان دہشت گرد ملک ہے ،اب تو اُس کے سابق وزیر اعظم نے بھی تسلیم کرلیا ہے ۔ اب پاکستانی قوم کی تمام اداروں سے ایک ہی اپیل ہے کہ پاکستان کے کسی بھی دشمن کو پاکستان میںرہنے کا کوئی حق نہیںہے۔
(چیئر مین تحریک بحالی صوبہ بہاولپور ہیں)
٭….٭….٭


سب سے زیادہ پڑھی جانے والی مقبول خبریں
   پاکستان       انٹر نیشنل          کھیل         شوبز          بزنس          سائنس و ٹیکنالوجی         دلچسپ و عجیب         صحت        کالم     
Copyright © 2016 All Rights Reserved