تازہ تر ین

نواز شریف نے احتساب کا قانون میرے لیے بنایا ، اب کٹھ پتلیوں سے کام نہیں چلے گا ،زرداری دل کی بات زبان پہ لے آئے

ٹنڈوالہ یار (نمائندہ خبریں) سابق صدر آصف علی زرداری نے کہا ہے کہ عمران خان کو اگلا وزیراعظم جیل بھیجے گا، قبل ازوقت الیکشن پر ابھی کچھ نہیں کہہ سکتا، ہم نے پہلے کہہ دیا تھا کٹھ پتلیوں سے کام نہیں چلے گا، غیر سنجیدہ وزیرِاعظم سے ملک نہیں سنبھالا جارہا،ان کے پاس سیاسی سوچ نہیں ہے،حکومت کوئی خطرہ ہوا تو ہم نہیں وہی ان کی مدد کریں گے جو ان کو اقتدار میں لے کر آئے، ان کی بڑی کوشش ہے کہ وہ کسی طریقے سے سسٹم توڑدیں،کچھ لوگکمزور شقوں کا بہانہ بنا کر 18ویں ترمیم کو ختم کرنا چاہتے ہیں۔ٹنڈوالہ یار میں میڈیا نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے سابق صدر مملکت آصف علی زرداری نے عمران خان کو غیر سنجیدہ وزیرِاعظم کہتے ہوئے کہا کہ ان سے ملک نہیں سنبھالا جارہا۔جب صحافی ایک صحافی نے قبل ازوقت انتخابات کی بات کی تو ان کا کہنا تھا کہ الیکشن کے بارے میں میں ابھی کچھ نہیں کہہ سکتا۔ ہم نے پہلے بھی کہا تھا کہ کٹھ پتلیوں سے کام نہیں چلے گا۔آصف علی زرداری نے کہا کہ ان سے ملک چل بھی نہیں سکتا، کیونکہ ان کے پاس سیاسی سوچ نہیں ہے جبکہ یہ لوگ اس معاملے میں نا سمجھ بھی ہیں۔سابق صدر نے کسی کا نام لیے بغیر کہا کہ ان کی بڑی کوشش ہے کہ وہ کسی طریقے سے سسٹم توڑدیں۔ان کا کہنا تھا کہ اگر حکومت کوئی خطرہ ہوا تو ہم نہیں وہی ان کی مدد کریں گے جو ان کو اقتدار میں لے کر آئے ہیں۔پی پی پی کے شریک چیئرمین کا کہنا تھا کہ ان کے دورِ حکومت کو ہی آئین کو اس کی اصل شکل میں بحال کیا گیا، تاہمکچھ لوگ کہتے ہیں 18 ویں ترمیم میں کچھ شقیں کمزور ہیں، یہ کمزور شقوں کا بہانہ بنا کر 18 ویں ترمیم ختم کرنا چاہتے ہیں۔سابق صدر کا کہنا تھا کہ شقوں کا بہانہ بناکر دوبارہ ون یونٹ کی سیاست شروع کرنا چاہتے ہیں، ہم نے ون یونٹ کے خلاف بھی جدوجہد کی تھی، ہماری اور ان کی سوچ میں فرق ہے۔حکومتی اقدامات پر تنقید کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ گورنر ہاو¿س میں چاہے کچھ بھی بنادیا جائے لیکن اس کی حفاظت کے لیے بھی دیواروں کی ضرورت تو پڑے گی۔ حکومت کا فرض لوگوں کا چولہا جلانا ہے نہ کہ دکانیں گرا کر انہیں ٹینٹ میں بیٹھنے کا کہا جائے۔آصف زرداری نے یہ بھی کہا کہ پہلے حکومت کو کوئی متبادل انتظام کرنا چاہیے تھا، اگر میرے وزرا اور ہماری ٹیم صحیح نہ ہوتی تو سندھ میں سب سے زیادہ سیٹیں کیسے لیتے؟۔جعلی اکاو¿نٹس کیس کے حوالے سے بات کرتے ہوئے سابق صدرِ مملکت نے کہا کہ مشترکہ تحقیقاتی ٹیم (جے آئی ٹی)نے پارٹی چیئرمین بلاول بھٹو زرداری کو تفتیش کے لیے طلب نہیں کیا۔انہوں نے واضح کیا کہ جے آئی ٹی نے انہیں اور فریال تالپور کو سوالات و جوابات کے لیے طلب کیا تھا۔آصف علی زرداری نے کہا کہ ماضی میں بھی پیپلز پارٹی کے خلاف بہت سازشیں ہوئیں۔سابق صدر کا کہنا تھا کہ وزیراعظم عمران خان انتقامی کارروائیاں کررہے ہیں اور کہتے ہیں ساری اپوزیشن کو جیل میں ڈالوں گا، ہم میں جیل جانے کی صبر و برداشت ہے لیکن کیا عمران خان خود جیل جانا برداشت کرسکتے ہیں، جیسی کرنی ویسی بھرنی، نواز شریف نے احتساب عدالتیں اور قانون میرے لیے بنائے تھے لیکن خود ان کے گلے پڑگئے اور آج وہ کٹہرے میں کھڑے ہیں، عمران خان آج اپوزیشن کو جیل بھیجیں گے لیکن آنے والا انہیں بھی جیل بھیجے گا۔آصف زرداری کا کہنا تھا حکومت غیر سنجیدہ ہے، سیاسی اپروچ نہیں، پہلے بھی بی بی کو تنگ کرنے کیلئے مجھے قیدی بنایا گیا، یہ ہماری ہمت آزمائیں، ہم ان کا ظلم آزمائیں گے، ہم میں ہمت، صبر بھی ہے۔ انہوں نے کہا افغانستان میں بھارت اور دوسری قوتیں دہشتگردی کرا رہی ہیں۔ آصف زرداری نے کہا کہ مرغی خریدیں اور اس کے انڈے بیچ کر دیکھیں کتنی خوشحالی آتی ہے، ہم پہلے ہی کہا تھا یہ ملک نہیں سنبھال سکتے۔پیپلزپارٹی کے شریک چیئرمین نے مزید کہا کہ جے آئی ٹی نے شوگر ملوں کوسیل کررکھا ہے، نقصان ہوگا تو برداشت کرنا پڑے گا لیکن افسوس ہے کہ نقصان غریب کا ہورہا ہے۔سابق صدر نے کہا کہ ہم تو خود دہشت گردی کا شکار ہیں مگر ہم پر دہشت گردی پھیلانے کا الزام لگایا جاتا ہے، بھارت افغانستان میں بیٹھ کر جو دہشت گردی پھیلا رہا ہے ٹرمپ اس پر کیا کہیں گے؟۔سابق صدر نے کہا کہ وزیراعظم عمران خان انتقامی کارروائیاں کررہے ہیں اور کہتے ہیں ساری اپوزیشن کو جیل میں ڈالوں گا، ہم میں جیل جانے کی صبر و برداشت ہے لیکن کیا عمران خان خود جیل جانا برداشت کرسکتے ہیں، جیسی کرنی ویسی بھرنی، نواز شریف نے احتساب عدالتیں اور قانون میرے لیے بنائے تھے لیکن خود ان کے گلے پڑگئے اور آج وہ کٹہرے میں کھڑے ہیں، عمران خان آج اپوزیشن کو جیل بھیجیں گے لیکن آنے والا انہیں بھی جیل بھیجے گا۔جعلی بینک اکاو¿نٹس اور منی لانڈرنگ کیس سے متعلق سوال کے جواب میں آصف زرداری نے کہا کہ جب تک جاں ہے یہ جنگ چلتی رہے گی، پہلے بھی مجھے قیدی بنایا گیا تھا اب بھی یہی ارادے ہیں، حکومت ہماری ہمت آزمائے ہم ان کے ظلم آزمائیں گے، جے آئی ٹی میں مجھے اور بہن فریال تالپور کو بلایا گیا ہے لیکن بلاول کو طلب نہیں کیا گیا ¾ہم نے سوالات کے جواب دئیے ہیں ¾ کیس چلے گا تو دیکھیں گے۔جب ایک صحافی نے قبل ازوقت انتخابات کی بات کی تو انہوںنے کہا کہ الیکشن کے بارے میں میں ابھی کچھ نہیں کہہ سکتا۔حکومتی اقدامات پر تنقید کرتے ہوئے انہوںنے کہاکہ گورنر ہاو¿س میں چاہے کچھ بھی بنادیا جائے لیکن اس کی حفاظت کے لیے بھی دیواروں کی ضرورت تو پڑے گی۔


سب سے زیادہ پڑھی جانے والی مقبول خبریں




دلچسپ و عجیب
کالم
آپ کی رائے
   پاکستان       انٹر نیشنل          کھیل         شوبز          بزنس          سائنس و ٹیکنالوجی         دلچسپ و عجیب         صحت        کالم     
Copyright © 2016 All Rights Reserved