All posts by asif azam

ماڈل ٹاؤن کیس میں شریف برادران کو ہر صورت پھانسی ہو گی، طاہرالقادری

 لاہور: پاکستان عوامی تحریک کے سربراہ ڈاکٹر طاہر القادری نے سانحہ ماڈل ٹاؤن پر جسٹس باقر نجفی کمیشن رپورٹ منظر عام کرنے کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ اس کیس میں آخری حد تک جائیں گے اور شریف برادران کو پھانسی ہو گی۔لاہور میں دھرنے کے شرکا سے خطاب کرتے ہوئے طاہر القادری کا کہنا تھا کہ آج مال روڈ پر بیٹھ کر ثابت کر دیا کہ 17 جون کے شہدا تنہا نہیں، ان لے لواحقین کو نا تو خریدا نہیں جا سکتا ہے اور نہ ہی دنیا کی کوئی طاقت انہیں ڈرا سکتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ پاناما کیس میں چور تو پکڑا گیا مگر 14 بے گناہ انسانوں کے خون سے ہولی کھیلنے والا قاتل ابھی باقی ہے جس کا نام شہباز شریف ہے اور نوازشریف کے پیچھے اصل قوت شہبازشریف کا پنجاب میں اقتدارہے۔طاہر القادری کا کہنا تھا کہ نوازشریف کہتے ہیں 70 سال سے تماشا لگا ہوا ہے مگر میں کہتا ہوں کہ نوازشریف صاحب 35 سال سے تو آپ نے تماشا لگا رکھا ہے، 30 سال سے اقتدار کر کے اپنے صرف خاندان کو خوشحالی دی، آپ کہتے ہیں میں ووٹ کا تقدس بحال کرانا چاہتا ہوں مگر پہلے یہ بتائیں پامال کس نے کیا، آپ نے ہی چھانگا مانگا سیاست پاکستان میں متعارف کروائی۔ انہوں نے کہا کہ نوازشریف نے 80 کی دہائی میں ایم پی ایز اور ایم این ایز کی بولیاں لگائیں، صدر سے مل کر بے نظیرکی حکومت ختم کروائی، ابھی نواز شریف پوچھ رہے ہیں کہ مجھے کیوں نکالا اور بعد میں شہباز شریف پوچھیں گے کہ مجھے کیوں نکالا، دنیا کی کوئی طاقت انہیں پھانسی کے پھندے سے نہیں بچا سکتی۔پاکستان عوامی تحریک کے سربراہ نے کہا کہ انقلاب کا نعرہ لگانے پر نوازشریف کو شرم آنی چاہیے، 17  جون کو لاشیں گرانے والے کس منہ سے انقلاب کی بات کرتے ہیں، آپ وزیراعظم بن کر اسلام آباد چلے گئے اور کرپشن کے لیے بھائی کو وزیراعلیٰ پنجاب بنا گئے اور اب آئین سے امانت دیانت کی ساری شقیں ختم کرنا چاہتے ہیں جب کہ آپ کا انقلاب نواز شہباز بچاؤ انقلاب ہے مگر نواز شریف ابھی تو انصاف کی پہلی کھڑکی کھلی ہے، دروازہ اور راستہ ابھی کھلنا باقی ہے۔ انہوں نے کہا کہ شہباز شریف کہتے ہیں کہ اشرافیہ نے ملک کو لوٹ لیا ہے، مگر میں کہتا ہوں کہ شہبازشریف صاحب، اشرافیہ تو آپ کا خاندان ہے جس نے ملک کو لوٹا ہے۔طاہر القادری نے سانحہ ماڈل ٹاؤن پر جسٹس باقر نجفی کمیشن رپورٹ منظر عام پر لانے کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ شہباز شریف نے خود کہا تھا کہ باقرنجفی کمیشن رپورٹ میں وزیراعلیٰ  پنجاب کو ذمہ دار قرار دیا گیا تو میں حکومت چھوڑ دوں گا، اگر وہ ذمہ دار نہیں تو رپورٹ کو منظر عام پر کیوں نہیں لاتے۔ انہوں نے کہا کہ عید کے بعد فیصل آباد میں احتجاجی دھرنے ہوں گے جس کے بعد ملتان اور راولپنڈی میں بھی ریلیاں نکالیں گے۔

مکی آرتھر نے مجھے گالیاں دیں، عمر اکمل کا الزام

لاہور: پاکستان کرکٹ ٹیم کے مڈل آرڈر بیٹسمین عمر اکمل نے دعویٰ کیا ہے کہ ہیڈ کوچ مکی آرتھر نے انہیں گالیاں دیں اور وہ کسی کی گالیاں نہیں سن سکتے۔لاہور میں میڈیا کے نمائندوں سے بات کرتے ہوئے عمر اکمل نے الزام لگایا کہ مکی آرتھر نے انہیں کہا کہ اکیڈمی نہ آؤ، جاؤ کلب کرکٹ کھیلو، وہ دوسرے کھلاڑیوں کو بھی برا بھلا کہتے ہیں، میں خود کو اچھا کرنا چاہتا ہوں لیکن رکاوٹیں ڈالی جا رہی ہیں۔عمر اکمل کا کہنا تھا کہ انہیں بلا جواز وارننگ دے کر کیمپ سے ڈراپ کیا گیا، انہوں نے کبھی رولز کی خلاف ورزی نہیں کی، ہیڈ کوچ کو گالیاں دینے سے چیف سلیکٹر انضمام الحق نے بھی نہیں روکا، کوچنگ اسٹاف کے رویے کی طرف کرکٹ بورڈ کی توجہ دلانا چاہتا ہوں۔ انہوں نے کہا کہ مکی آرتھر اور کوچنگ اسٹاف نے انہیں ٹارگٹ بنا رکھا ہے، اکیڈمی کا مقصد غلطیوں اور خامیوں پر قابو پانا ہوتا ہے، نیشنل کرکٹ اکیڈمی میں مجھے ٹریننگ سے روکنا سمجھ سے بالاتر ہے، مکی آرتھر نے کہا کہ مجھے اکیڈمی میں کس نے آنے دیا۔وکٹ کیپر بیٹسمین عمر اکمل کا کہنا تھا کہ مکی آرتھر کو یہ زیب نہیں دیتا کہ وہ پاکستان کے کھلاڑیوں کو گالیاں دیں، کسی سینیئر کھلاڑی نے مکی آرتھر کو نہیں روکا کہ وہ پاکستانی پلیئرز کے لیے ایسے الفاظ استعمال نہ کریں۔ انہوں نے کہا کہ وہ اپنی انجری کی وجہ سے انگلینڈ گئے تھے کہیں غائب نہیں ہوئے تھے اور اس حوالے سے انہوں نے مشتاق احمد اور ڈاکٹر سہیل کو بتادیا تھا۔عمر اکمل نے نیشنل کرکٹ اکیڈمی کے عملے کے حوالے سے بھی گفتگو کی اور کہا کہ پی سی بی اکیڈمی اسٹاف نے ان کے ساتھ کام کرنے انکار کیا، عملے نے کہا کہ وہ صرف سینٹرل کنٹریکٹ کے حامل کھلاڑیوں کے ساتھ کام کریں گے۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ چیمپیئنز ٹرافی میں انہیں غلط وارننگ دے کر فٹنس ٹیسٹ سے روکا گیا، 2009 سے اب تک انہیں کبھی جرمانہ نہیں ہوا اور نہ ہی انہوں نے کبھی ڈسپلن کی خلاف ورزی کی۔