All posts by asif azam

پاکستان میں زر مبادلہ کے ذخائر حد تک کمی

لاہور (ویب ڈیسک)پاکستان میں زر مبادلہ کے ذخائر خطرناک حد تک کم ہو گئے۔ پاکستان کے پاس صرف 14 اعشاریہ 4 ارب ڈالر رہ گئے ہیں جن سے تین ماہ کی ادائیگیاں ممکن ہیں جبکہ صورتحال کا سامنا کرنے کے لئے حکومت کو ہنگامی اقدامات اٹھانے کا مشورہ دیا گیا ہے۔شاہد خاقان عباسی کی حکومت کو ایک کے بعد دوسرے بڑے چیلنج کا سامنا ہے۔ پاکستان کے زرمبادلہ کا ذخیرہ تیرہ برسوں میں پہلی مرتبہ انتہائی خطرناک حد تک کم ہو گئے ہیں۔ بگڑتی ہوئی صورتحال میں متعلقہ اداروں اور نجی سیکٹر کی جانب سے حکومت کو ہنگامی اقدامات ا±ٹھانےکا مشورہ دیا گیا ہے۔
سابق وزیراعظم نوازشریف اور وزیرخزانہ اسحاق ڈار کے بلند و بانگ دعوو¿ں کی قلعی کھلتی جا رہی ہے۔ زرمبادلہ کے ذخائر صرف اتنے رہ گئے کہ ان سے حساس ادائیگیاں ہی کی جا سکتی ہیں۔جبکہ عین ممکن ہے کہ عالمی اداروں کی جانب سےقرضے جاری کرنے اور مالیاتی معاہدوں پر نظر ثانی کا کہہ دیاجائے، ذرائع کہتے ہیں کہ موجودہ زر مبادلہ کے ذخائرصرف قرضوں کی واپسی، دفاعی خریداریوں اورانتہائی لازمی اشیا کی درآمد کے کام آسکتے ہیں، نجی سیکٹر کی جانب سے بیرونی تجارت کی پالیسی میں بنیادی تبدیلیوں اورزر مبادلہ کیلئے برآمدات بڑھانے کے لئے بھی دباو ڈالا جا رہا ہے، اور تو اور ایکسپورٹس سے متعلقہ اداروں کی جانب سے نئی قومی پایسی کا بھی مطالبہ کیا گیا ہے ۔
بات یہیں ختم نہیں ہوئی بلکہ عالمی اداروں کو حساس مشینری اور خام مال صرف برآمدی مال میں استعمال کرنے کی یقین دہانی کرانے کی پالیسی کا مطالبہ بھی کر دیا گیا ہے۔ دیکھنا یہ ہے کہ شاہد خاقان عباسی کی حکومت اس بڑے چیلنج کا سامنا کیسے کرتی ہے۔

کولنگ ووڈ، ڈوپلیسی، مورکل اور سیموئل بدری ورلڈ الیون میں شمولیت پر آمادہ

 لاہور: انگلش ٹیم کے سابق کپتان پال کولنگ ووڈ، ویسٹ انڈین کرکٹر سیموئل بدری، جنوبی افریقہ کے فاف ڈوپلیسی اور مورنے مورکل پاکستان کا دورہ کرنے والی ورلڈ الیون کا حصہ بننے کیلیے تیار ہیں۔ورلڈ ٹی 20 کی فاتح انگلش ٹیم کی قیادت کرنے والے آل راؤنڈر نے ورلڈ الیون کیلیے اپنی دستیابی ظاہر کر دی ہے اور وہ اینڈی فلاور کی کوچنگ میں لاہور آنے والی ٹیم کے ساتھ 12، 13 اور 15 سمتبر کو ٹی ٹوئنٹی میچز کھیلیں گے، ورلڈ الیون میں شمولیت کی صورت میں کولنگ ووڈ کی کاؤنٹی چیمپئن شپ میں ڈرہم کی نمائندگی نہیں کر پائیں گے، ورلڈ الیون کے ہر ممبر کو 75 ہزار پاؤنڈ کے قریب ادائیگی کی جائے گی جس کو بین الاقوامی سیریز کا درجہ دیا جائے گا۔ذرائع کے مطابق ویسٹ انڈین کرکٹر سیموئل بدری، جنوبی افریقی ٹیسٹ ٹیم کے کپتان فاف ڈوپلیسی اور مورنے مورکل نے بھی ورلڈ الیون کے لئے دستیابی ظاہر کر دی ہے۔

نیب میں پیش ہونگے یا نہیں،بڑی خبر آگئی

لاہور: سابق وزیراعظم نوازشریف نے ایک بار پھر نیب کے سامنے پیش ہونے سے انکار کردیا تاہم انہوں نے نیب میں 2 صفحات پر مشتمل جواب جمع کرادیا۔ نیب کی جانب سے نوٹس جاری ہونے کے باوجود نوازشریف اور ان کا خاندان نیب کے سامنے پیش ہورہا۔ نیب کی جانب سے شریف خاندان کو اتوار کے روز طلب کیا گیا تھا تاہم کوئی بھی فرد نیب کے سامنے پیش نہ ہوا جب کہ آج بھی نوازشریف بذات خود نیب کے سامنے حاضر نہ ہوسکے تاہم انہوں نے 2 صفحات پر مشتمل اپنا تحریری جواب جمع کرادیا ہے۔نوازشریف نے تحریری جواب میں کہا کہ نیب کا موجودہ تحقیقاتی طریقہ اس کے اپنے ہی قانون کی خلاف ورزی ہے اور یہ کھلم کھلا خلاف ورزی تحقیقات نہیں بلکہ دھوکا ہے۔ جواب میں کہا گیا کہ نیب آرڈیننس کے طریقہ کار کے تحت تحقیقات کا آغاز ہونا چاہئے چئیرمین نیب کا مقرر کردہ افسر تحقیقات کا مجاز ہوگا جب کہ  نیب تحقیقات آرڈیننس 1999 کے تحت ہوئیں تو ہم اسے قبول کریں گے۔ نوازشریف نے کہا کہ ہم نے اس حوالے سے نظرثانی اپیل سپریم کورٹ میں داخل کرادی ہے درخواست پر فیصلہ آنے تک پیش نہیں ہوسکتا۔

چین پاکستان کے دفاع میں کھل کر سامنے آگیا

بیجنگ :امریکی صدر ٹرمپ کی الزام تراشیوں کے بعد چین کھل کر پاکستان کی حمایت میں سامنے آگیا۔نئی امریکی پالیسی پر تنقید کرتے ہوئے چینی وزارت خارجہ کا کہنا تھا کہ پاکستان نے دہشتگردی کی خلاف سب سے زیادہ قربانیاں پیش کیں۔پاکستان ہمیشہ دہشتگردی کیخلاف فرنٹ لائن پر رہا ہے۔عالمی برادری کو چاہیے کہ وہ پاکستان کے دہشتگردی کے خلاف کردار کو تسلیم کرے۔چینی وزارت خارجہ کا کہنا تھا کہ پاکستان بھر پور طریقے سے دہشتگردی کے خلاف جنگ کر رہا ہے اور اس نے دہشتگردی کے خلاف جنگ میں اہم کامیابیاں بھی حاصل کی ہیں۔مزید یہ کہ خطے اور عالمی امن کے لیے امریکا اور پاکستان کے تعاون پر چین خوش ہے۔

ٹرمپ نے پاکستان کیخلاف اپنا اصل چہرہ دکھا دیا،بڑی دھمکی دیدی

ورجینیا(ویب ڈیسک) امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے افغانستان پالیسی میں پاکستان پر الزامات کی بوچھاڑ کردی اور آئندہ کیلیے پاکستان سے ایک بار پھر ڈومور کا مطالبہ کردیا۔آرلینگٹن کے فوجی اڈے سے خطاب کرتے ہوئے ڈونلڈ ٹرمپ نے افغانستان کیلیے امریکی پالیسی میں پاکستان سے متعلق پالیسی بیان کرتے ہوئے الزام لگایا ہے کہ پاکستان میں دہشتگردوں کی مبینہ پناہ گاہوں پر خاموش نہیں رہیں گے، پاکستان افراتفری پھیلانے والے افراد کو پناہ دیتا ہے، انہوں نے کہا کہ پاکستان سے نمٹنے کے لیے اپنی سوچ تبدیل کر رہے ہیں جس کے لیے پاکستان کو پہلے اپنی صورتحال تبدیل کرنا ہوگی اور پاکستان تہذیب کا مظاہرہ کرکے قیام امن میں دلچسپی لے۔ جنوبی ایشیا میں اب امریکی پالیسی کافی حد تک بدل جائے گی۔امریکی صدر نے اپنے خطاب میں ایک طرف پاکستانی عوام کی دہشتگردی کیخلاف قربانیوں کو سراہا تو دوسری جانب واضح کیا کہ پاکستان اربوں ڈالر لینے کے باوجود دہشتگردوں کو پناہ دے رہا ہے جب کہ ہم دہشتگردی کیخلاف پاکستان کی مالی مدد کرتے آئے ہیں۔ پاکستان دہشتگردی کیخلاف ہمارا اہم شراکت دار ہے اس لیے پاکستان کا افغانستان میں ہمارا ساتھ دینے سے فائدہ، بصورت دیگر نقصان ہوگا۔ٹرمپ نے کہا کہ پاکستان اور بھارت 2 ایٹمی طاقتیں ہیں، ایٹمی ہتھیار دہشتگردوں کے ہاتھ نہیں لگنے دینا چاہتے تاہم پاکستان اور افغانستان میں ہمارے مقاصد واضح ہیں اس لیے پاکستان اور افغانستان ہماری ترجیح ہوں گے۔ انہوں نے کہا کہ افغانستان میں صرف فوجی کارروائی سے امن نہیں ہو سکتا، سیاسی، سفارتی اور فوج حکمت یکجا کرکے اقدام کریں گے، افغان حکومت کی مدد جاری رکھیں گے اور امریکا افغان عوام کے ساتھ مل کر کام کرے گا اس لیے افغانستان کو اپنے مستقبل کا تعین خود کرنا ہوگا۔داعش کے حوالے سے امریکی صدر نے کہا کہ انہیں پھلنے پھولنے دینا ہماری غلطی تھی تاہم اب عراق کی طرح انخلا کی غلطی افغانستان میں نہیں دہرائیں گے، افغانستان سے نکلے تو پیدا ہونے والا خلا دہشتگرد پورا کریں گے۔ انہوں نے کہا کہ امریکا جلد بازی میں عراق سے نکل گیا، فائدہ دہشتگردوں نے اٹھایا اورعراق سے تیز انخلا کا نتیجہ داعش کے تیزی سے پروان کی صورت نکلا، تیزی سے انخلا کی صورت میں ممکنہ نتائج کا پتہ ہے۔امریکی صدر نے خطاب کے دوران دہشتگردی کے حوالے سے پالیسی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ دہشتگرد رکنے والے نہیں، بارسلونا حملہ ثبوت ہے، دہشتگردوں کو بزور طاقت شکست دیں گے۔ انہوں نے دہشتگردوں کو خبردار کرتے ہوئے کہ قاتل سن لیں، امریکی اسلحے سے بچنے کیلیے جگہ نہیں ملے گی اور دہشتگردی کے علمبرداروں کو دنیا میں کوئی جگہ نہیں ملے گی۔ڈونلڈ ٹرمپ نے افغانستان میں بھارتی کردار کے اعتراف بھی کیا اور مطالبہ کیا کہ بھارت دہشتگردی کے خاتمے میں ہماری مدد کرے۔ انہوں نے کہا کہ امریکا کو افغانستان میں چلنج صورتحال کا سامنا ہے اس لیے افغانستان کو ہر زاویے سے دیکھ کر حکمت عملی تیار کی، ہم کسی نہ کسی طرح مسائل کا حل نکالیں گے اور دہشتگردی بڑھانے والوں پر معاشی پابندیاں لگائیں گے اور یقین ہے نیٹو بھی ہماری طرح فوج بڑھائے گا۔ ان کا کہنا تھا کہ مجھے بھی اپنی عوام کی طرح افغان جنگ میں طوالت پر پریشانی ہے۔امریکی صدر نے کہا کہ نائن الیون کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ اس واقعے کو کوئی نہیں بھول سکتا، یہ حملے بدترین دہشتگردی ہیں، ان کی منصوبہ بندی اور عملدرآمد افغانستان سے ہوا تاہم امریکا کو بیرونی دشمنوں سے بچانے کیلیے متحد ہونا پڑیگا اور دہشتگردی کے خلاف ساتھ دینے والے ہر ملک سے اتحاد کریں گے۔ ٹرمپ نے کہا کہ اتحادیوں سے مل کر مشترکہ مفادات کا تحفظ کریں گے اور دہشتگردوں کے مکمل خاتمے تک پیچھے نہیں ہٹیں گے۔ڈونلڈ ٹرمپ کا کہنا تھا کہ امریکی قوم گزشتہ 16 سال کے جنگی حالات سے پریشان ہو چکی ہے جب کہ امریکا نے نسل در نسل مسائل کا سامنا کیا اور ہمیشہ فاتح رہا۔

بیگم کلثوم نواز کےحلق میں کینسرکی تشخیص

لندن: مسلم لیگ ن کے قائد اور سابق وزیراعظم محمد نواز شریف کی اہلیہ بیگم کلثوم نواز کو حلق کے کینسرکی تشخیص ہوئی ہے،کینسر قابل علاج ہے،بیگم کلثوم نواز جلد صحت یاب ہوجائیں گی۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق لندن میں سابق وزیراعظم نوازشریف کی اہلیہ بیگم کلثوم نوازکو حلق میں کینسرکی تشخیص ہوئی ہے۔ برطانوی ڈاکٹرز کا کہنا ہے کہ کلثوم نواز کو گلے کا کینسر قابل علاج ہے۔تاہم اگلے چند دنوں میں ان کا کینسر کا  علاج شروع کر دیا جائے گا۔ بیگم کلثوم نواز جلد صحت یاب ہوجائیں گی۔ واضح رہے بیگم کلثوم نواز حلق میں کینسر کی تشخیص کے باعث لندن میں مقیم ہیں۔ بیفم کلثوم نوازضمنی الیکشن این اے 120میں مسلم لیگ ن کی امیدوار ہیں۔ تاہم بیماری کی وجہ سے انہیں اچانک لندن جانا پڑ گیا۔ جس کے باعث وہ حلقہ این اے 120کی انتخابی مہم کیلئے بھی میدان عمل میں نہ نکل سکیں۔

بھارت کے ‘جوہری رویے’ میں تبدیلی پاکستان کے لیے خطرہ

اسلام آباد(ویب ڈیسک) سینٹر آف انٹرنیشنل اسٹریٹیجک اسٹڈیز (سی آئی ایس ایس) کا کہنا ہے کہ بھارت کی جانب سے اپنے جوہری نظریات پر نظر ثانی کرنا پاکستان کی سیکیورٹی خدشات کو بڑھادے گا جس سے جنوبی ایشیا کا استحکام شدید خطرات سے دوچار ہوجائے گا۔سی آئی ایس ایس کی جانب سے ”اقدار روکنے سے طاقت روکنے تک: بھارت کے ’نیوکلیئر ڈاکٹرائن‘ میں تبدیلی“ کے عنوان سے ایک تقریب منعقد کی گئی جس میں بھارت کے اپنی جوہری رویے میں ممکنہ تبدیلی جبکہ پاکستان کے لیے اس کے اثرات اور علاقائی استحکام پر بحث کی گئی۔سی آئی ایس ایس ماہرین کا کہنا تھا کہ بھارت کے جوہری رویے میں تبدیلی پاکستان کو خطرات سے دوچار کر سکتی ہے جس کے نتیجے میں دونوں ہمسایہ ممالک کے درمیان بات چیت کا ماحول بھی محدود ہوسکتا ہے۔اپنے حالیہ بیان میں بھارتی حکام نے اشارہ دیا تھا کہ نئی دہلی جوہری ہتھیاروں کی جنگ میں پہل نہ کرنے کے اپنے جوہری ڈاکٹرائن پر نظر ثانی کر سکتا ہے جبکہ اس میں ’پیش بندی کے طور پر دوشمن کو روکنے کے لیے پہل‘ کرنے کے آپشن کو شامل کیا جاسکتا ہے۔بھارت کے موجودہ جوہری نظریہ کے تحت نئی دہلی، پاکستان کے جوہری حملے کے جواب میں جوہری کارروائی کر سکتا ہے تاہم اپنی پالیسی کی تبدیلی سے بھارت، پاکستان کے جوہری ہتھیاروں کو پہلے ہی نشانہ بنا سکتا ہے۔نیو یارک کی یونیورسٹی آف البانی میں پولیٹیکل سائنس کے اسسٹنٹ پروفیسر ڈاکٹر کرسٹوفر کلاری نے کہا کہ بھارت کی جانب سے پاکستان کے جوہری ہتھیاروں کو پہل کرتے ہوئے نشانہ بنانا بہت مشکل ہے لیکن امریکا اور اسرائیل کی جانب سے حاصل ہونے والی ٹیکنالوجی اور اپنی جوہری صلاحیت کو بڑھاتے ہوئے اس کے لیے ایسا کرنا نا ممکن نہیں۔انہوں نے کہا کہ دونوں ممالک کے درمیان کشیدگی میں مزید خرابی پیدا ہونے کی صورت میں بھارت، پاکستان کی کسی بھی کارروائی کو روکنے کے لیے اس آپشن کو استعمال کر سکتا ہے۔ہارورڈ یونیورسٹی میں بیلفر سینٹر برائے سائنس اور بین الاقوامی امور میں ڈاکٹریٹ کی ڈگری حاصل کرنے والے ڈاکٹر منصور نے بھی ملے جلے رد عمل کا اظہار کیا اور کہا کہ بھارت کسی بھی ممکنہ جنگ کے خطرے سے قبل پاکستان کے جوہری اثاثوں پر اسٹرائیک کرکے اپنا غلبہ حاصل کرنے کی کوشش کر سکتا ہے۔سی آئی ایس ایس کے ایگزیکٹیو ڈائریکٹر علی سرور نقوی نے اپنے ابتدائی ریمارکس میں پاکستان کی سیکیورٹی کے لیے جن خدشات کی جانب اشارہ کیا ان میں امریکا اور بھارت کا بڑھتا ہوا تعاون ہے۔سی ا?ئی ایس ایس کے سینیئر اہلکار ڈاکٹر نعیم سالک نے دعویٰ کیا کہ نئی دہلی کی جانب سے سامنے ا?نا والا یہ بیان بھارت کی جارحانہ حکمت عملی کا عکاس ہے۔

نواز شریف کو سب سے بڑا جھٹکا ، اسحاق ڈار نے سب سے بڑا فیصلہ کر لیا

اسلام آباد: نجی ٹی وی چینل کے پروگرام میں بات کرتے ہوئے سینئیر صحافی چوہدری غلام حسین نے کہا کہ اسحاق ڈار اس ہفتے کے آخر تک مستعفہی ہو جائیں گے ۔ ان کا کہنا تھا کہ یہ ان کے بس کا روگ نہیں ہے ۔ اسحاق ڈار نے نیب کے سامنے بھی پیش ہونا ہے۔ وہ نیب کو کہہ بھی چُکے ہیں کہ میں پیش ہوں گا۔ جس کے بعد ان کا نواز شریف سے تعلق ٹوٹ جائے گا۔

وفاقی حکومت نے آئین کے آرٹیکل 62،63 میں ترمیم کا اعلان کردیا ہے

اسلام آباد: حکومت نے آئین کے آرٹیکل 62،63میں ترمیم کا اعلان کردیا ہے،آرٹیکل 62 میں ناہلی کی مدت کا کوئی ذکرنہیں،ہم آئینی ترمیم کمیٹی میں لے جائیں گے۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق وزیرقانون زاہد حامد نے آج قومی اسمبلی اجلاس میں اظہار خیال کرتے ہوئے کہا کہ آئین کے آرٹیکل 62 میں ناہلی کی مدت کا کوئی ذکرنہیں۔  نااہلی کی مدت 5 سال سے بھی کم ہونی چاہیے۔ ہم آئینی ترمیم کمیٹی میں لے جائیں گے۔ زاہد حامد نے مزید کہاکہ آئین میں تمام جماعتوں سے مشاورت کے بعد ہی ترمیم کی جائے گی۔ واضح رہے حکومت نے آئین کے آرٹیکل 62 اور 63 میں اس حوالے سے ترمیم کرنے کا فیصلہ کرلیا ہے۔ حکومت نے آئین کے آرٹیکل 62 اور 63 میں ترمیم کا فیصلہ سپریم کورٹ میں پاناما کیس میں نوازشریف کی ناہلی کے بعد کیا ہے۔

ایم کیوایم پاکستان نے آل پارٹیز کانفرنس ملتوی کردی

 کراچی: ایم کیو ایم پاکستان نے آل پارٹیز کانفرنس ملتوی کردی ہے۔

ایم کیو ایم (پاکستان) نے گزشتہ روزکراچی میں  سیاسی اور مذہبی جماعتوں کو آل پارٹیز کانفرنس میں شرکت کی دعوت دی تھی تاہم آج متعدد سیاسی جماعتوں نے اے پی میں شرکت سے معذرت کرلی جس میں پیپلزپارٹی، جماعت اسلامی، مسلم لیگ(فنکشنل)، اے این پی، مسلم لیگ (ق) سمیت جے یو آئی (ف) شامل ہیں۔

آل پارٹیز کانفرنس میں شرکت نہ کرنے والی جماعتوں کا کہنا تھاایم کیو ایم پاکستان نے کانفرنس کے حوالے کسی قسم کے ایجنڈا کا ذکر نہیں کیا اسی وجہ سے وہ کانفرنس میں شریک نہیں ہورہے۔

دوسری جانب گورزر سندھ محمد زبیر کا کہنا تھا کہ ایم کیو ایم پاکستان کی اتحاد کی کوششوں کی سراہنا ہوگا اور اس معاملے پر سیاست نہیں ہونی چاہیے۔