تازہ تر ین

وزیراعلیٰ خودعوام کو گھر پہنچاتے رہے

لاہور (خبر نگار‘ جنرل رپورٹر‘ خصوصی رپورٹر) ضلعی انتظامیہ کی کارکردگی کا پول کھل گیا، لاہور ڈوب گیا ڈپٹی کمشنر اپنے دفتر تک محدود رہی۔ وزیراعلی پنجاب عثمان بزدار خود اپنی گاڑی ڈرائیو کر کے بارش میں پھنسے لوگوں کو ریسکیو کیا، جبکہ ضلعی انتظامیہ خوب غفلت کے مزے لیتی رہی۔تفصیلات کے مطابق لاہور شہر میں بارش نے ضلعی انتظامیہ کی کارکردگی کا پول کھول دیا ناقص انتظامات کی وجہ سے پورا لاہور پانی میں ڈوب گیا پورا شہر دریا کامنظر پیش کرتا رہا جس کو دیکھ کت وزیرا علیٰ پنجاب خود میدان میں آئے انہوں نے اپنی گاڑی پر سوار ہوکر شہر کے مختلف علاقوں کا وزٹ کیا انہوں نے جی پی او چوک ،پرانی انار کلی، لکشمی چوک ،ریلوے اسٹیشن، مال روڈ اور اس کے ملحقہ علاقوں دورہ کیا بارش میں پھنسے لوگوں کو خود نکالا اور ان کو سڑک بھی پار کروائی۔اس موقعہ پر شہریوں نے وزیراعلی پنجاب کے اس اقدام کو خوب سراہا۔ذرائع کے مطابق عثمان بزدار نے لاہور کے علاقوں میں بارش کے بعد نکاسی آب کے انتظامات کا جائرہ لیااور ضلعی انتظامیہ پربرہمی کا اظہار بھی کیا اور بارش کے پانی کو فوری نکالنے کی ہدایات کیں۔ ذرائع کا یہ بھی کہنا ہے جب ڈپٹی کمشنر کو اطلاع ملی کہ وزیراعلیٰ خود شہر کا وزت کر رہے ہین تو فوری دفتر سے چھتری لے کر نکل پڑی جبکہ وزیراعلی خود بغیر چھتری کے چل رہے تھے۔ وزےراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدارنے موسلا دھار بارش کے دوران لاہور کے مختلف علاقوں کا دورہ کےا۔ وزےراعلیٰ عثمان بزدار نے خود گاڑی ڈرائےو کی اور شملہ پہاڑی، بوہڑ والا چوک، مال روڈ، منٹگمری روڈ، لکشمی چوک، جی پی او چوک اوردےگر علاقوں مےںشدےدبارش کے بعد پےدا ہونے والی صورتحال کا جائزہ لےا۔ وزےراعلیٰ نے بارش کے پانی مےں پھنسی خواتےن اوربچوں کو اپنی گاڑی مےںبےٹھاےا اور انہےں ان کے متعلقہ مقام پر پہنچاےا۔ وزےراعلیٰ نے اپنے دورے کے دوران نکاسی آب کےلئے کےے جانے والے انتظامات کا جائزہ لےا اور شہرےوں سے نکاسی آب کےلئے کےے جانے والے انتظامات کے بارے مےں پوچھا۔شہرےوں نے سڑکوں پرپانی کھڑا ہونے کی شکاےات کی جس پر وزےراعلیٰ نے کہا کہ مےں آج اپنے عوام کی مشکلات کا خود جائزہ لےنے نکلا ہوں اورانشائ اللہ انتظامےہ اورواسا حکام نکاسی آب کے کام کو جلد مکمل کرےں گے۔وزےراعلیٰ نے اس موقع پرانتظامی افسران اورواسا حکام کوہداےت کی کہ جتنی جلدی ممکن ہوسکے نکاسی آب کا کام مکمل کےا جائے اورنکاسی آب کے لئے تمام تر وسائل اورمشےنری بروئے کار لائی جائے۔وزےراعلیٰ نے انتظامےہ اور واسا حکام کوپانی کے نکاس کی خود نگرانی کرنے کی ہداےت کرتے ہوئے کہا کہ انتظامی افسرا ن اورواسا حکام نکاسی آب مکمل ہونے تک فےلڈ مےں خود موجود رہےں۔انہوںنے کہا کہ بارش کے دوران سڑکوں پر ٹرےفک رواں دواں رکھنے کےلئے ٹرےفک پولےس مستعدی سے کام کرے۔انہوںنے کہا کہ لاہور کو پےرس بنانے کا دعوی کرنے والوں نے شہر مےں پانی کے نکاس کا کوئی منصوبہ نہےں بناےا۔شہر مےں سفےد ہاتھی نما منصوبہ بنانے والوں نے نکاسی آب کا بنےادی انتظام نہےں کےا۔انہوںنے کہا کہ شہرےوںکی مشکلات کا جلد ازالہ کےا جائے گا۔مےںعوام سے ہوں اورعوام کی مشکلات کے جلد ا زالے کےلئے انتظامےہ کو متحرک کردےاہے۔وزےراعلیٰ سردار عثمان بزدارشہر کے مختلف علاقوں کے دورے کے بعدپنجاب سےف سٹی اتھارٹی کے دفتر پہنچ گئے۔وزےراعلیٰ نے پنجاب سےف سٹی اتھارٹی کے کےمروںکے ذرےعے شہر مےں شدےد بارش سے پےدا ہونےوالی صورتحال کا جائزہ لےا۔وزےراعلیٰ نے مختلف سڑکوں پر پانی کی صورتحال کاکےمروںکے ذرےعے معائنہ کےا اورنکاسی آب کےلئے ضروری ہداےات جاری کیں۔وزےراعلیٰ نے سڑکوں پر ٹرےفک کی روانی کا بھی مشاہدہ کےا۔وزےراعلیٰ نے کہا کہ شدےد بارش سے شہرےوں کےلئے پےدا ہونے والی تکلےف کو خود محسوس کےا ہے اورہمارے دکھ سکھ سانجھے ہےں۔ مےں اس مشکل صورتحال مےں اپنے شہرےوں کے ساتھ کھڑا ہوں۔ نکاسی آب کو جلد سے جلد ےقےنی بناےا جائے گا۔ ترجمان وزےراعلیٰ ڈاکٹر شہباز گل بھی وزےراعلیٰ کے ہمراہ تھے۔لاہور (جنرل رپورٹر‘خصوصی رپورٹر) شہر میں گزشتہ روز موسلا دھار بارش، گلیاں اور سڑکیں تالاب کا منظر پیش کرنے لگیں، نشیبی علاقے زیر آب آگئے۔ تفصیلات کے مطابق لاہور میں موسلادھاربارش، بادل کھل کر برسے، لاہورمیں جل تھل ایک ہوگیا، شاہراہیں اورگاڑیاں پانی میں ڈوب گئیں، شہری گھروں میں محصور ہوکر رہ گئے۔ شہریوں کو مشکلات کا سامنا کرنا پڑا، محکمہ موسمیات نے مزید بارش کی پیشگوئی کردی۔ شہر کی سڑکوں پر پانی جمع، کچا جیل روڈ، قائداعظم انڈسٹریل ایریا، پیکوروڈ پر موٹرسائیکلیں اورگاڑیاں بند، فیروزپورروڈ،کینال روڈ، راوی روڈ پر ٹریفک کی لمبی قطاریں، ریلوے سٹیشن سے ملحقہ سڑکوں پر بھی گاڑیوں کی قطاریں لگ گئیں، بارش نے جہاں شہر میں جل تھل ایک کردیا وہیں متعدد علاقوں میں پانی جمع ہوگیا۔صوبائی دارالحکومت میں موسلا دھار بارش کے با عث جہا ں متعد د سڑ کیں ندی نا لو ں کا منظر پیس کر ر ہی ہیںوہی ٹریفک کا نظا م بھی بر ی طر ح متا ثر ہوا ہے۔ شمالی لاہور،سمن آباد، ملتا ن روڈ ،ریلو ے اسٹیشن اورمال روڈ سے ملحقہ سڑ کو ں پر پا نی کھڑاہو نے کے باعث مال روڈ اور ملحقہ سڑکیں جام ہو کر رہ جاتی ہیں جس سے شہریوں کو سخت دشواری کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔ٹریفک اس قدر زیادہ ہوتی ہے کہ ٹریفک پولیس کو سگنل بند کرکے ٹریفک کورواں دواں رکھنا پڑتا ہے۔ شہر میں بارش کے باعث اکثرسگنل تو خود بخود ہی خرا ب ہو جا تے ہیں البتہ ٹریفک پولیس ٹریفک کی روانی بحال کر نے کی پوری کوشش کرتی ہے۔ شہر میںموسلا دھار بارش کے جہا ں متعد د سرکیں ندی نا لو ں کا منظر پیس کر ر ہی وہی ٹریفک کو بری طرح متاثر کیا ہے جس سے جیل روڈ اور مال روڈ ، وارث رو ڈ ، لکشمی چو ک ، با دا می با غ سے ملحقہ سڑکیں بند ہو کر رہ گئیں۔خاص طور پر گز شتہ روزشام کے اوقات میںٹریفک جام رہی جبکہ ریلوے اسٹیشن اور راوی پار سے آنے والی سڑکیں تو ہر وقت لا قانونیت کی شکل پیش کر تیرہیں۔ان علاقوں میں ٹریفک اس قدر زیادہ ہوتی ہے کہ عا م دنو ں میں بھی صبح سے لیکر رات گئے تک سڑکوں پر ٹریفک جام رہتی ہے۔بارش کی وجہ سے شہر کے دیگر علاقوں، فیرو ز پو ر روڈ ، شاہ عا لمی چو ک ، گو المنڈ ی ، شمع چو ک ، مغلپورہ ،شالیمار لنک روڈ ،جی ٹی روڈ ،شالیمار چوک ،کینال روڈ ،فیروز پور روڈ ،بند روڈ ،گلشن راوی ،داتا دربار ،چوبرجی ،لٹن روڈ ا ور گنگا رام ہسپتال کے اطراف کی سڑکوں پر ٹریفک جام رہی اور گاڑی سواروں کو با رش کے با عث ان علاقوں سے گزرنے میں خاصا وقت لگا۔دوسری جا نب چیف ٹریفک آفیسر لاہور کیپٹن(ر)لیاقت علی ملک ٹریفک کی روانی کو یقینی بنانے کیلئے میدان میں آگئے،جبکہ ایس پی ٹریفک صدر ڈویڑن سردار آصف خاں اور ایس پی ٹریفک سٹی ڈویڑن حماد رضا قریشی بھی شہریوں کی خدمت اور ٹریفک بہاو¿ کو جاری رکھنے کیلئے پیش پیش رہے۔سینئر ٹریفک افسران وارڈنز کے ہمراہ مال روڈ،کینال روڈ سمیت متعدد اہم مقامات پر خود ٹریفک کلیئر کرواتے رہے۔ سی ٹی او نے شہر بھر میں ٹریفک کی روانی کا جائز ہ لینے کیلئے مولانا شوکت علی روڈ،کینال روڈ،جیل روڈ،مال روڈ،فیروز پور روڈ،لکشمی چوک،سرکلر روڈ سمیت متعددنشیبی علاقوں کا جائزہ لیااور سرکل افسران کو موقع پر فوری ہدایات جاری کیں۔انہوں نے کہاکہ واسا حکام اور دیگر محکوں کیساتھ رابطے میں رہا جائے تاکہ سڑکوں پر پانی جمع ہونے سے ٹریفک کی روانی متاثر نہ ہو۔ وزٹ کے دوران کیپٹن(ر)لیا قت علی ملک نے فرض شناسی اور بارش کے کھڑے پانی میں شہریوں کی مدد کرنے پر متعدد انسپکٹرز اور ٹریفک وارڈنز کو فوری موقع پر انعامات سے نوازا۔ چیف ٹریفک آفیسر اور ڈویڑنل کی طرف سے بارش کے دوران وارڈنز پر انعامات کی بارش کی گئی۔اس موقع پر کیپٹن(ر)لیاقت علی ملک کا کہناتھا کہ ٹریفک وارڈنز نے بارش کے دوران ڈیوٹی کرکے فرض شناسی کی اعلیٰ مثال قائم کی۔ٹریفک کانسٹیبل سے لیکر سی ٹی او تک تمام افسران سڑکوں پرشہریوں کی سہولت اور ٹریفک کی روانی کیلئے موجود رہے۔موسلا دھار بارش سے ہسپتال بھی متاثر، ہسپتالوں کے داخلی راستوں پر پانی جمع، جناح ہسپتال کے در و دیوار سے پانی برستا رہا،جنرل ہسپتال کے متعدد وارڈز بھی ندی نالوں کا منظر پیش کرتے رہے۔دوسری جانب چلڈرن ہسپتال اور جنرل ہسپتال میں بھی پانی جمع ہونے سے مریضوں کو ہسپتالوں میں داخل ہونے میں مشکلات کا سامنا کرنا پڑا۔ بارش کی شدت کی وجہ سے سرکاری اور ٹیچنگ ہسپتالوں میں ڈاکٹرز اور عملہ بھی ڈیوٹی پر نہیں پہنچ سکا۔ جس سے ہسپتالوں میں علاج معالجے کی فراہمی بد ترین تعطل سے دوچار رہی۔لاہور میں موسلا دھار بارشوں کے باعث شہر بھر میں بجلی کی ترسیل کا نظام درہم برہم ہوگیا۔لاہور کے مختلف علاقوں میں تیز بارش کے باعث سڑکوں پر پانی جمع جبکہ بجلی کی فراہمی بھی معطل ہوگئی جس سے شہریوں کو مشکلات کا سامنا ہے۔لیسکو حکام کے مطابق بارشوں کے باعث بجلی کا نظام درہم برہم ہے اور 150 سے زائد فیڈرز سے بجلی کی فراہمی معطل ہوگئی ہے۔لیسکو حکام کا کہنا ہے کہ بارش کا سلسلہ ختم ہونے کے بعد بجلی کی مکمل فراہمی شروع ہو جائے گی۔محکمہ موسمیات کے مطابق گلبرگ میں 74، سمن آباد میں 69، ائیر پورٹ پر 52، جیل روڈ پر 58، تاج پورہ میں 33 اور اقبال ٹان میں 36 ملی میٹر بارش ریکارڈ کی گئی ہے۔محکمہ موسمیات نے شہر میں جمعرات تک تیز بارشوں کی پیشگوئی کی ہے۔صو با ئی دا رلحکومت میں دو مختلف مقاما ت پر دیوار گر نے سے اور چھت گر نے سے بچی جا ں بحق ہو گئی۔ جبکہ ایک بچے سمےت دو افرا د زخمی ہو گئے۔بتا ےا گےا ہے کہ کا ہنہ کے علاقہ میں ڈیفنس رو ڈ پر چھت گر نے سے7سالہ عروج فا طمہ جا ں بحق جبکہ ر ضا زخمی ہو گیا۔ دوسری جا نب ٹا?ن شپ کے علاقہ پیپکو روڈ گھر کی دیوار گر گئی جس کے باعث 2 افراد زخمی ہو گئے۔ ریسکیو عملے نے دونوں زخمیوں کو ہسپتال منتقل کر دیا ہے۔بتا ےا گےا ہے کہ ٹا?ن شپ کے علاقہ میں اسلم کے گھر کی دیوار گر نے سے رمیز اور حسین زخمی کو گئے، امدا د ی ٹیموں نے موقع پر پہنچ کر زخمیوں کو طبی امداد کےلئے ہسپتال منتقل کیا۔ شہر میں ہونیوالی موسلادھار بارش کے باعث مختلف پولیس افسران کے دفاتر اور تھانوں میں پانی کھڑا ہو گیا، پانی کھڑا ہونے سے دفاتر میں سویلین کیساتھ ساتھ پولیس اہلکاروں کو بھی مشکلات کا سامنا کرنا پڑا۔بتا ےا گےا ہے کہ حالیہ بارش کے باعث سی سی پی اولاہور کے آفس اورانویسٹی گیشن ہیڈ کوارٹر میں بھی بارش کا پانی کھڑا ہو گیا، تھانہ مغلپورہ، نواں کوٹ، ہربنس پورہ، باٹا پور، فیکٹری ایریا، نشتر کالونی، ساندہ اور مناواں سمیت دیگر تھانوں میں بارشی پانی جمع ہو گیا۔ تھانوں اور پولیس دفاتر میں بارش کا پانی کھڑا ہونے سے جہاں دفاتر میں کام متاثر ہوا وہیں سائلین نے بھی تھانوں کا رخ نہ کیا۔


اہم خبریں
   پاکستان       انٹر نیشنل          کھیل         شوبز          بزنس          سائنس و ٹیکنالوجی         دلچسپ و عجیب         صحت        کالم     
Copyright © 2016 All Rights Reserved