تازہ تر ین

بھارتی سازش بے نقاب

محمد فاروق عزمی….جواں عزم
پاکستان کو معرض وجود میں آئے 71 برس سے زیادہ ہوگئے ہیں، لیکن پاکستان کے دشمنوںمیں بھارت ایسا متعصب اور گھٹیا دشمن ہے جو روزِ اول سے ہی پاکستان کے خلاف سازشوں میں ملوث ہے اور اس کی ہر ممکن کوشش رہتی ہے کہ پاکستان کو دنیا میں ناکام اور بدنام کیا جائے۔ اس کی ان مذموم کوششوں میں امریکہ اور اسرائیل بھی اپنا حصہ ڈالتے رہتے ہیں اور ہمیشہ پاکستان کو نقصان پہنچانے کے درپے ہوتے ہیں۔تاہم اپنی تمام تر مکاریوں کے باوجود پاکستان کو اپنی ناپاک خواہش کے مطابق دنیا کے نقشے سے مٹانے میں ناکام ہیں اور اللہ کے فضل و کرم سے تاقیامت ناکام ہی رہیں گے۔ پاکستان صبح قیامت تک قائم و دائم رہے گا اور ترقی کرتا رہے گا۔ جہاں پاکستان کے دشمن ہمہ وقت پاکستان کے خلاف سازشوں میں مصروف رہتے ہیں وہاں پاکستان کو اللہ تعالیٰ نے ایسے محب وطن، ذہین اور صاحبِ عقل و دانش افراد سے نوازا ہے جو ہمیشہ دشمن کو اس کی ناپاک سازشوں میں ناکام و نامراد کرنے اور ان کی سازشوں کا پردہ چاک کرکے انھیں بے نقاب کرنے میں مستعد اور تیار رہتے ہیں اور دشمن کو منہ کی کھانی پڑتی ہے۔
روزنامہ خبریں کے چیف ایڈیٹر اور معروف مصنف جناب ضیا شاہد نے ”گاندھی کے چیلے“ کے عنوان سے ایک ایسی تحقیقی اور دستاویزی کتاب لکھی جس میں انہوں نے خاص طور پر گاندھی کے پاﺅں دھونے والے سرخ پوش خان عبدالغفار خاں (عرف باچا خان) ان کے بھائی ڈاکٹر خان اور بیٹے عبدالولی خان کی پاکستان دشمنی اور ان کے انگریز اور ہندو کے ایجنٹ ہونے کے ٹھوس، ناقابل تردید ثبوت پیش کیے اور ایسی ناقابل تردید داستانیں اور اندرونی کہانیاں تحریر کیں کہ پاکستان کے ان اندرونی دشمنوں کو آج تک اس کا جواب میسر نہ آسکا۔ وجہ یہ کہ جناب ضیا شاہد نے جو کچھ اپنی کتاب میں بیان کیا ایک تو وہ سو فیصد سچ ہے اور دوسرے انہوں نے جتنے بھی ثبوت اور حوالے مہیا کیے وہ سب انہی پاکستان دشمن خاندان کے اپنے لوگوں کی کتابوں سے فراہم کیے۔ گویا ضیا شاہدصاحب نے ان کو انہی کی کرنسی میں ادائیگی کی، لہٰذا ان ننگِ وطن لوگوں کو ان باتوں کی تردید کی جرا¿ت کیسے ہوتی ؟ اس کتاب کا ایک ایڈیشن ستمبر 2017 ءمیں قلم فاﺅنڈیشن نے شائع کیا، اس کے بعد 2017 ءمیں ہی جناب ضیا شاہد نے اپنی ایک اور کتاب ”پاکستان کے خلاف سازش“ میں ایسے دیگر اندرونی دشمنوںکو بے نقاب کیا تھا جو پاکستان میں رہ کر ، اس کی آزاد فضا میں سانس لے کر، اس دھرتی سے پیدا ہونے والا اناج کھاکر اپنے ہی وطن اپنی ہی دھرتی کے خلاف سازشوں کا جال بنتے رہتے ہیں اور دشمنوں کے ہاتھ مضبوط کرنے میں کوئی دقیقہ فرو گزاشت نہیں کرتے۔ اس کتاب میں خاندانِ باچا خان کے علاوہ جن لوگوں کے چہروں سے ضیا شاہد کے قلم نے نقاب اتارا ہے ان میں الطاف حسین، محمود اچکزئی، اکبر بگٹی، بلوچی گاندھی، عبدالصمد اچکزائی ،حربیار مرمی، برہمداغ بگٹی، جی ایم سید وغیرہ کے نام شامل ہیں۔ یہ پاکستان کی خوش قسمتی ہے کہ ضیا شاہد صاحب جیسے محب وطن اہل قلم انہیں آئینہ دکھانے اور ان کے مکروہ چہروں سے نقاب نوچنے میں کسی سستی اور کاہلی کا شکار نہیں ہوتے۔
2008ءمیں بھارت نے پاکستان کے خلاف ایک سازش کا جال بُنا اور اس کی خوب خوب تیاری کرکے ایک ڈرامہ تیار کیا اس کی ریہرسل کی اور اس ڈرامے کے لیے تیار کردہ کرداروں کو اچھی طرح ٹریننگ دے کر 26 نومبر 2008ءکو بھارت کے شہر ممبئی میں تاج محل ہوٹل اینڈ ٹاور، اوبرائے ٹرائڈنٹ ہوٹل، لیوپولڈ کیفے کے اسٹیج سے ”آن ایئر“ کر دیا اور تین دن تک دنیا کو اسے لائیو (Live) دکھایا جاتا رہا۔ اجمل قصاب اس ڈرامے کا مرکزی کردار تھا، کہانی کا مرکزی خیال پاکستان کو دنیا میں بدنام کرنا اورد ہشت گرد ملک قرار دلوانا تھا، ممبئی ڈرامے کے اس ایکٹ میں 169 بھارتی مارے گئے۔دیگر مارے گئے افراد میں 25 کا تعلق، اسرائیل، جرمنی، برطانیہ، آسٹریلیا، مریشس، ملائیشیا ، جاپان، فرانس، امریکہ، سنگا پور، اومان، سپین ، فلپائن، کینیڈا، پولینڈ اور اردن سے تھا۔ بھارت اسرائیل او رامریکہ ایسے سنگ دل اور سفاک ممالک ہیں جو اپنے مذموم اور نا پاک مقاصد کی تکمیل کیلئے اپنوں کا ہی خون بہانے میں ذرا نہیں ہچکچاتے۔ بھارت میں اس کی تازہ مثال پلوامہ حملہ ہے جس میں بھارت نے اپنے ہی فوجیوں کو خون میں نہلایا اور یہی کچھ 26/11 میں رچائے گئے بھارتی ڈرامے میں ہوا جہاں پاکستان کو بدنام کرنے اور دنیا میں دہشت گرد ملک قرار دیئے جانے کی ناپاک کوشش کیلئے تیار کیے گئے ڈرامے میں اپنے ہی شہریوں اور غیر ملکی مہمانوں او رسیاحوں کو خون میں نہلا دیا اور اس کا سارا الزام کسی تاخیر اور تحقیق کے بغیر فوراً پاکستان پر تھوپ دیا پھر اپنے ایک جھوٹ کو چھپانے اور نبھانے کیلئے بھارت نے کتنے ہی جھوٹ گھڑے، امریکہ اس کا ہمنوا ہوا ، لیکن جھوٹ کے پیر کہاں ہوتے ہیں؟ ممبئی حملوں (26-11-2008) کو گذرے 10 برس سے زائد عرصہ ہوگیا ہے لیکن اس کی باز گشت ہر روز مختلف الفاظ اور واقعات کے تناظر میں امریکہ اور بھارت سنائے جاتے ہیں۔ منیر احمد بلوچ نے 26/11 کے ممبئی حملوں کے صرف پانچ دن بعد روزنامہ خبریں اور دی پوسٹ میں اپنے مضامین کے ذریعے بھارت کی پیش کی گئی کہانی کا جواب دیتے ہوئے اس حملے سے پہلے اور بعد کے کچھ پوشیدہ گوشے سامنے لانے شروع کر دیئے۔ اپنی معلومات اور پھر دنیا کے اہم ممالک میں گھومتے ہوئے ممبئی حملوں کے حوالے سے منیر احمد بلوچ کے علم میں کچھ ایسے انکشاف اور معلومات سامنے آئیں جن سے بھارت کے اس ”ڈرامے“ کا راز فاش ہوگیا اور جھوٹ اور فریب کی یہ ہنڈیا بیچ چوراہے کے ریزہ ریزہ ہوگئی ۔ ممبئی حملوں کو دس سال سے زیادہ کا عرصہ ہوگیا ہے لیکن دس گیارہ سال بعد بھی امریکی صدر کی نشست پر براجمان ڈونلڈ ٹرمپ وہی لب و لہجہ اختیار کیے ہوئے ہیں جو سرا سر حقائق کے منافی ہے لہٰذا ضروری تھا کہ بھارت کو اس کے جھوٹ کے جواب میں سچائی کی تصویر دکھائی جائے اور دنیا کو بتایا جائے کہ اصل کہانی اور ڈرامہ کیا تھا۔ منیر احمد بلوچ نے بہت عرق ریزی اور تحقیقات کے بعد جو کتاب لکھی ہے اس کا نام ہے ”ممبئی 26/11 ہمینت کرکرے اور اجمل قصاب“ اجمل قصاب کو پھانسی ہوچکی اور دنیا اس کے نام سے واقف ہے۔یہ کتاب بھار ت کی مکاریوں کا پردہ چاک کرتی ہے ۔ بھارت، امریکہ اور اسرائیلی میڈیا کے مسلسل الاپے گئے اس راگ کے جواب میں بہت اہم اور موثر دستاویز ہے جس راگ کی تان ہر چھوٹے بڑے واقعے کا الزام پاکستان پر لگانے کے سوا کہیں نہیں ٹوٹتی۔ منیر احمد بلوچ نے ممبئی حملوں کے سلسلے میں اپنی تمام تحقیقات کو ترتیب اور سلیقے کے ساتھ کتابی شکل میں شائع کرکے دنیا کو بتا دیا ہے کہ ان حملوں کا ماسٹر مائنڈ خود بھارت ہے ۔ اُردو میں لکھی گئی اس کتاب کے انگریزی ترجمے کی اشد ضرورت اوراہمیت اس لیے بھی بڑھ جاتی ہے کہ FATF کے ہر اجلاس سے پہلے ممبئی حملوں کی تمام گندگی بھارت پاکستان کی چار دیواری میںپھینکنے کی کوشش کرتا ہے لہٰذا ضروری ہے کہ انگریزی ترجمے کے ساتھ پاکستان کے موقف اور بے گناہی کے ناقابل تردید ثبوت دنیا کے سامنے پیش کردیئے جائیں کیونکہ اس کتاب کا ایک ایک لفظ پاکستان کے خلاف کی جانے والی ان سازشوں کاپردہ چاک کرتا ہے جس کا تخلیق کار بھارت ہوتا ہے اور اس کی پشت پر امریکہ اور اسرائیل کا مکار چہرہ بھی نظرآتا ہے ۔ کتاب کے عمیق مطالعے سے منیر احمد بلوچ کا یہ دعویٰ درست ثابت ہوتا ہے کہ اس کتاب میں انہوں نے بھارت کی تمام چالبازیوں ، جھوٹ اور مکاریوں کا جواب ایسے موثر انداز میں ثبوتوں کے ساتھ پیش کر دیا ہے کہ کوئی اس کی تردید کرنے کی ہمت نہیں کرسکے گا۔ پاکستان زندہ باد
(کالم نگار مختلف موضوعات پر لکھتے ہیں)
٭….٭….٭


اہم خبریں
   پاکستان       انٹر نیشنل          کھیل         شوبز          بزنس          سائنس و ٹیکنالوجی         دلچسپ و عجیب         صحت        کالم     
Copyright © 2016 All Rights Reserved