تازہ تر ین

”جھوٹھےا وے اک جھوٹھ ہور بول جا“

ڈاکٹراختر گلفام
”سےاسست اےک عبادت ہے “ ،ےہ جملہ ےہ فقرہ ہم اکثر سنتے ہےںجو پاکستانی سےاستدان اکثر اور تواتر کے ساتھ بولتے ہےںاور پاکستانی عوام اس کو سن سن کر اب تک بے وقوف بنتی چلی آرہی ہے ۔سےاست کو عبادت کہنے والوں نے تو لندن، پےرس،دوبئی اور پاکستان مےں محل در محل خرےد لئے اور ”سلطنتیں“ بنالےں۔ان حکمرانوں کی اولادوں نے اےک دن بھی کسی دفتر ،کسی کھےت کھلےان ،کسی مل ،کسی فےکٹری ،کسی دوکان مےں کام نہےں کےا لےکن پھر بھی وہ لاکھوں مےں نہےں کروڑوں مےں کھیلتے ہےں۔
”جھوٹ اس کثرت اور تواتر کے ساتھ بولو کہ وہ سچ لگنے لگے“۔پنجاب کے کئی سالوں تک بلا شرکت غےرے ”بادشاہ سلامت “ اور سابق وزےر اعلیٰ مےاں شہباز شرےف نے مذکورہ مقولے سے بھرپور ”استفادہ“ حاصل کےا۔آصف علی زرداری کو گھسےٹنے کا چلاتے رہے لےکن گھسےٹا نہےں۔آصف زرداری کے پےٹ پھاڑنے کی چےخےں مارتے رہے لےکن ان کا پےٹ پھاڑا نہےں۔آصف زرداری کے گلے مےں رسہ ڈالنے کی بات کی لےکن اس کوبھی نہیں نبھاےا ۔لاہور کو پےرس بنانے کی بات کی لےکن لاہور کو پےرس تو نہ بنا سکے البتہ لندن اور پاکستان مےں اپنے ” محل “ بنا لئے۔ پاکستان مےں چھ ماہ مےں بجلی ختم نہ کی تو اپنا نام بدلنے کا کہہ ڈالا ۔بجلی کے اندھرے تو ختم نہ ہوئے لےکن ان کے گھر ”ماےا“ کی سفےدی خوب پھےلی۔اگر برا نہ مانیں تو ہم ان کے نام بدلنے کی آفرکو قبول کرتے ہوئے ان کا نام ”چوٹھےا“ رکھ دےتے ہےں ،مےرا نہےں خےال کسی کو اس پر اعتراض ہوگا۔آپ نے پاکستان کا وہ مشہور زمانہ گانا تو سنا ہی ہوگا :
”جھوٹھےا وے اک جھوٹھ ہور بول جا
کوئی نواں لارہ لا کے سانوں رول جا“
مےرے خےال مےںگانالکھنے والے نے جب ےہ گانا لکھا ہوگا تو اس کے سامنے اس کا محبوب نہےں بلکہ مےاں شہباز شرےف ہوں گے جو پاکستان مےں ہر بننے والی بلڈنگ کو سٹےٹ آف دی آرٹ کہتے ہوئے نہ تھکتے تھے لےکن اپنا ،اپنے بھائی ،اپنی فےملی ، اپنے بھائی کے سمدھی گوےا پورے خاندان کا علاج برطانےہ آکر کرواتے ہےں ،جہاں پہنچنے کے لئے اےک غرےب آدمی اےئر ٹکٹ خرےدنے کا سوچ بھی نہےں سکتا،مگر ےہ باہر کے چکر ایسے لگاتے ہےں جےسے کوئی اپنے گھر سے نکل کر نکڑ کی دوکان سے کوئی چےز لےنے کے لئے آئے اور جائے۔کیا گذشہ تےس برسوں مےں ےہ حکمران خاندان اےک بھی اےسا ہسپتال نہ بنا سکے جہاں پاکستان کے غرےب تو کےا ،ان کے اپنے ”ٹبر“ کے افراد کا علاج ہو سکتا۔
بحیثیت مسلمان ہمار اےمان ہے کہ موت کا اےک دن مقرر ہے اور اسے آکر رہنا ہے۔ جس کسی نے بھی غرےبوں کو لوٹ کر پےسہ بناےا ہو وہ اپنی ناجائز ےا جائز دولت کو اپنے ساتھ لے کر نہےں جا سکتا کےونکہ کفن مےں جےب نہےں ہوتی۔
”تم نے سب کوتاراج کےا مگر تم نہ جےئے“
میاں شہباز شریف جب وزیر اعلیٰ تھے اور ان کے بھائی میاں نواز شریف وزیراعظم کی کرسی پر براجمان تھے ،اس وقت کے ایک ممبر پنجاب اسمبلی جو وزیر بھی تھے، ایک دفعہ مجھے بتایا کہ جب کبھی کبھار میاں شہباز شریف سے ملاقات ہوتی تو وہ تکبرانہ انداز میں اپنی انگلیوں کے آگے کے دو پوٹے ہی ملاتے ۔ میں نے جب ایم پی اے صاحب سے سوال کیا کہ آپ وزارت چھوڑ دیتے، جس پر انہوں نے کہا کہ پھر ان کے شر سے مجھے اور میرے خاندان کے لوگوں کو کون بچاتا۔
شہباز شرےف اپنے بھائی نواز شرےف کے علاج اور اپنے مےڈےکل چےک اپ کے لئے لندن آئے ۔ وہ روزانہ لندن مےں بھاشن دےتے ہےں۔ان بھاشنوں مےں ےہ سچ بھی عوام کے سامنے رکھےں کہ عمران خان نے ملک کو دےوالےہ ہو نے سے بچا لےا۔ےہ سچ بھی بتائیں کہ وہ آپ کے زمانے مےں بگڑے ہوئے اداروں کو بہتر بنانے مےں کامےاب ہو رہے ہےں۔ےہ سچ بتانے مےں دےر مت کےجئے گا کہ جس پی آئی اے کے طےارے مےں آپ کے خاندان کے لوگ بھر بھر جاتے تھے اور خسارے در خسارے مےں تھی اس کی حالت اب سدھرنے لگی ہے ۔جس وزےر اعظم ہاﺅس مےں آپ کے بھائی کے دور مےں دن رات کھابے چلتے تھے ، اس وزےر اعظم ہاﺅس کی گےس اوربجلی کا بل وزےر اعظم عمران خان خود اپنی جےب سے دےتے ہےںےہ سچ بھی عوام کو بتائےے گا ۔ےہ بھی بتائیں کہ آپ کے داماد اور بےٹے کی طرح عمران خان کے وزےر اعظم ہوتے ہوئے اس کے کسی بھی رشتہ دار نے کوئی فائدہ نہےں اٹھاےا اور عمران خان پر ان کا بڑے سے بڑا لےکن عقلمند دشمن بھی رتی بھر کرپشن کا الزام نہےں لگا سکتے۔ ےہ تو ضرور بتائیے گا کہ 3ڈالر مےں ملنے والی گےس قطر سے 8ڈالر مےں15 سال کا معاہدہ کرکے گےا۔
پھر وہی کہوں گا ……..
”جھوٹھےا وے اک جھوٹھ ہور بول جا
کوئی نواں لارہ لا کے سانوں رول جا“
(روزنامہ ”خبرےں“ اور ”چےنل فاےﺅ“ کے
لندن مےں بےوروچےف ہےں)
٭….٭….٭


اہم خبریں
   پاکستان       انٹر نیشنل          کھیل         شوبز          بزنس          سائنس و ٹیکنالوجی         دلچسپ و عجیب         صحت        کالم     
Copyright © 2016 All Rights Reserved