تازہ تر ین

مےری ٹرمپ کی کتاب اور ڈونلڈ ٹرمپ

سجادوریا
مےری ٹرمپ (MaryTrump) امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی بھتیجی ہےں۔ان کی عمر 55سال ہے اور وہ امریکی صدر کے بڑے بھائی فریڈٹرمپ جونئیر(Fred Trump Jr (کی بےٹی ہےں۔انہوں نے اےک کتاب ”Too Much and Never Enough“ کے نام سے لکھی ہے جس مےں انہوں نے اپنے خاندانی پس منظر،خاندانی معاملات اور کاروباری معاملات کے بارے مےں کھلے انداز مےں لکھا ہے۔وہ لکھتی ہےں کہ ان کے والد فریڈ ٹرمپ جونیئر شراب کے عادی تھے،خاندان کے رئیل اسٹےٹ کے بزنس مےں دلچسپی نہیں لےتے تھے،جس کی وجہ سے ان کے والد ٹرمپ سینئر ان کے ساتھ سختی سے پےش آتے ،کہتے کہ کاروبار کو سنبھالنے کی کوشش کرو۔لےکن وہ شراب کے رسیا ہونے کی وجہ سے والد کی ڈانٹ اور تضحیک کے باوجود کاروبار مےں دل نہ لگا سکے اور بالآخر کثرت شراب نوشی کے باعث دل اور گردوں کے امراض کا شکار ہو کر 42 سال کی عمر مےں موت کے منہ مےں چلے گئے۔وہ لکھتی ہےں کہ ڈونلڈ ٹرمپ چونکہ اس وقت چھوٹا تھا ،وہ اپنے بڑے بھائی کی والد کے ہاتھوں تضحیک کو دےکھتا تھا ،اس نے ےہ سبق سیکھ لیا کہ کاروبار کو سنبھالنا ہے اور اےسی تضحیک برداشت نہیں کرنی،کچھ بھی کرنا پڑے ،اخلاقی ،غےر اخلاقی ہتھکنڈے استعمال کرنا پڑےں ،پےسہ بنانا ہے،طاقت حاصل کرنی ہے۔وہ مزیدلکھتی ہے کہ ٹرمپ کےلئے ’ دھوکہ دہی ‘ غےر اخلاقی نہیں بلکہ ”cheating is a way of life“ ہے۔امریکی صدر کی بھتیجی ہونے کے ناتے انہوں نے ڈونلڈ ٹرمپ کی ذاتی معلومات بھی نیوےارک ٹائمز کے ساتھ شےئر کی تھیں جو اس کتاب مےں بھی شائع کی گئی ہےں۔
مےں سمجھتا ہوں کہ ےہ کتاب امریکی صدر کی اخلاقےات اور ساکھ کو بھر پور نقصان پہنچائے گی کیونکہ ڈونلڈ ٹرمپ نے اس کتاب کی اشاعت کو رکوانے کے لیے عدالت سے رجوع کیا ہوا تھا ،جو عدالت نے مسترد کردیا ہے ۔اب ےہ کتاب معمول کے مطابق 28جولائی کو ” سائمن اور شُسٹر پبلشرز “شائع کرےں گے۔ مےری ٹرمپ نے اس کتاب مےں اپنے چچا ڈونلڈ ٹرمپ کی اخلاقی ساکھ کا جنازہ نکال دیا ہے۔مےری ٹرمپ لکھتی ہےں کہ ڈونلڈ ٹرمپ اےک فراڈ،انا پرست اور بد اخلاق شخص ہے۔عورتوں سے ملنے کا شوقین لیکن جو عورت ملنے سے انکار کرے اس کو موٹی،بھدی اور بدصورت کہہ کر اس کی توہین کرکے اپنی انا کی تسکین کرتا ہے۔مےری ٹرمپ نے لکھا کہ ڈونلڈ ٹرمپ اےک دھوکے باز شخص ہے ،اس نے مجھے ےعنی ”مےری ٹرمپ“ کو کہا کہ گھوسٹ رائٹر کے طور اےک کتاب لکھو،وہ کہتی ہےں جب مےں نے لکھی تو مجھے بغےر معاوضے کے فارغ کر دیا ۔
مےں اس کتاب کے لیک شدہ مواد کے ذریعے سامنے آنے والی معلومات پر ٹرمپ کی شخصیت اور کردار پر حےران نہیں ہوا بلکہ مجھے اپنے ذاتی تجزیہ پر مزید ےقین ہو گےا ،کیونکہ مےری ذاتی رائے مےں ٹرمپ اےک حواس باختہ ،انا پرست اور تےز مزاج شخصیت ہےں۔مےں ان کے ذاتی کردار پر کبھی بات نہیں کرتا تھالےکن سےاسی حوالوں سے ان کی کہہ مکرنیوں،دھمکیوں اور بدزبانی کا حوالہ بھی دےتا رہا ہوں اور مےں اس چیز کا مشاہدہ کر چکا ہوں کہ وہ مجھے اےک بلےک مےلر کے طور پر نظر آےا،جب اس نے اقتدار سنبھالتے ہی سعودی عرب ،پاکستان اور اےران کے بارے مےں دھمکی آمےز بےانات دےنا شروع کر دیے اور ایسی زبان استعمال کی جو ایک سربراہ مملکت کو زیب نہیں دیتی۔جبکہ جس ملک میں دولت نظر آئی ان سے تعلقات بڑھا لئے ۔ ےہ عمل سپر پاور کے صدر کی معاشی اخلاقےات کا بھی پتہ دےتا ہے۔یہ شخص جب امریکہ کا صدر بنا ،اس نے پاکستان کے خلاف بےانات دےنا شروع کر دیے،اس نے کہا کہ پاکستان کو ڈالرز دےتے ہےں ،دہشت گردی کی جنگ مےں پاکستان اگر تعاون کرتا ہے تو کوئی احسان نہیں کرتا ۔پھر ےہ وقت بھی اقوام عالم نے دےکھا کہ ےہی ٹرمپ پاکستان کے وزیر اعظم کا استقبال کرتا ہے بلکہ تعریفوں کے پل باندھ دےتا ہے۔ٹرمپ کے بارے میں دنیا کے اکثر وبیشتر مبصرین کی رائے یہی ہے کہ یہ پہلے بےانات داغ دےتا ہے بعد مےں سوچتا ہے،کیونکہ ےہ اےک منہ پھٹ اور بد لحاظ شخص ہے اس لئے دیگر ممالک کے لوگ اس کے ساتھ الجھنا نہیں چاہتے،وقت گزارتے ہےں۔
جب ڈونلڈ ٹرمپ امریکی صدر منتخب ہوا ،تومےں حےران رہ گےا کہ امریکی قوم نے کس شخص کو ہیلری کلنٹن کے مقابلے مےں منتخب کیا ہے،پھر گزرتے وقت اور حالات کے ساتھ مجھے اندازہ ہوتا گےا کہ اس کو امریکی اسٹےبلشمنٹ کسی خاص مقصد کے لیے لائی ہے ۔امریکہ کی ناکامیوں کا جو سلسلہ افغانستان مےں چل رہا تھا وہ ٹرمپ کے سر ڈال کر وہاں سے نکلنے کی کوشش کی جائے گی،پاکستان،سعودی عرب اور اےران کے ساتھ اسکور سےٹل کیا جائے گا ۔لےکن ٹرمپ ےہاں بھی ناکام رہا ،پاکستان اور دیگر ممالک نے بہت عمدگی سے ٹرمپ کی جارحانہ پالیسیوں سے بچ نکلنے کی تدابیر اختےار کیںجس مےں کامےاب بھی رہے۔ڈونلڈ ٹرمپ صرف شمالی کوریا کے صدر کِم جونگ اُن سے خوف کھاتا ہے،اسی طرح امریکہ اس وقت چین کی بڑھتی ہوئی طاقت سے خوف کھاتا ہے۔امریکہ نے خود کو دنےا بھر کے تنازعات مےں اُلجھا رکھا ہے ،واحد معاشی ہتھےار بدمعاشی،اسلحہ سازی اور بم بارود بےچنا ےعنی اسلحہ سازی کی صنعت ہے۔اسلئے دنےا بھر مےں جنگےں جاری رکھنا امریکہ کی معاشی پالیسی کا اہم جزو ہے۔کبھی کوےت، عراق، شام،لیبیا اور کبھی افغانستان اور اےران پر حملے کے بہانے ڈھونڈنا۔
چین نے کمال دانشمندی سے خود کو جنگوں سے دور رکھا اور معاشی ترقی پر توجہ مرکوز رکھی،دنےا بھر مےں اپنے کاروباری تعلقات قائم کیے،معاشی مفادات کا رشتہ قائم کیا ،دیگر ممالک کے ساتھ اعتماد کا رشتہ قائم کیا جس سے دنےا بھر مےں چین کی نےک نامی اور وقار مےں اضافہ ہوا جبکہ امریکہ کی اخلاقی،معاشی اوررےاستی ساکھ بری طرح مجروح ہوئی۔اس وقت امریکہ پر اعتبار کرنے کو کوئی ملک بھی تےار نہیں ہے۔ان حالات مےں چین اور امریکہ اےک دوسرے کے آمنے سامنے ہےں۔چین نے اندرونی مداخلت کے الزام مےں امریکہ کے تین سےنےٹر زاور اےک اےلچی پر پابندی عائد کر دی ہے۔اس ساری صورتحال مےں امریکہ کو نقصان ہو رہا ہے۔ امریکہ کے تعلقات اور اثرو رسوخ سکڑ رہے ہےں اور چین کا اثرو رسوخ وسیع ہو رہا ہے۔اسلئے امریکہ کو اپنا اعتماد بحال کرنے کے لئے موثر و مثبت اقدامات کرنا ہو نگے ،جس کے لئے مےرا خےا ل ہے کہ بہت تاخیر ہو چکی ہے۔ امریکہ نے اب زوال پذیر ہی ہونا ہے،چین اب مستقبل کی مضبوط معاشی طاقت بن رہا ہے ۔
بہر حال مےں عرض کرنا چاہتا ہوں کہ مفادات کی سےاست اور دھندے مےں اخلاقی اقدار ڈھونڈنا بہت مشکل ہو تا ہے،لےکن مےری ٹرمپ نے تو اپنی کتاب مےں اپنے چچا ڈونلڈ ٹرمپ کو بری طرح اےکسپوز کر دیا ہے۔مےرا خےال ہے کہ جس مقصد کے لئے اس شخص کو صدر بناےا گےا تھا ،وہ مقاصد پورے نہیں ہوئے ۔اب مجھے نہیں لگتا کہ ٹرمپ اگلی بار امریکہ کا صدر بن سکے گا،ہو سکتا ہے اس مقصد کے لئے ڈونلڈ ٹرمپ کی بھتیجی مےری ٹرمپ کی کتاب کو لانچ کیا جا رہا ہو۔اس طرح ٹرمپ کو مزید بدنام کر کے شکست سے دوچار کیا جائے،کسی بہتر شخص کا انتخاب ےقینی بناےا جا سکے۔
(کالم نگارقومی امورپرلکھتے ہیں)
٭….٭….٭


اہم خبریں
   پاکستان       انٹر نیشنل          کھیل         شوبز          بزنس          سائنس و ٹیکنالوجی         دلچسپ و عجیب         صحت        کالم     
Copyright © 2016 All Rights Reserved