All posts by admin

اجازت کے بغیر کوئی دھرنا نہیں دے سکتا، اسلام آباد ہائی کورٹ

اسلام آباد :اسلام آباد ہائی کورٹ نے ریمارکس دیے ہیں کہ اجازت کے بغیر کوئی دھرنا نہیں دے سکتا۔سلام آباد ہائی کورٹ کے چیف جسٹس اطہر من اللہ نے مولانا فضل الرحمان کے حکومت مخالف لانگ مارچ اور دھرنے کے خلاف دائر درخواست کی سماعت کی۔ ہائیکورٹ نے پوچھا کہ کیا دھرنے والوں نے اسلام آباد انتظامیہ سے دھرنے کی اجازت لی ہے؟۔درخواست گزار حافظ احتشام نے بتایا کہ مولانا فضل الرحمان نے 27 اکتوبرکو لانگ مارچ کااعلان کیا ہے جس کی اجازت نہیں لی، اسلام آباد ہائی کورٹ نے ڈیموکریسی پارک کو دھرنوں کے لیے مختص کیا تھا اور سپریم کورٹ نے بھی فیض آباد دھرنا کیس میں واضح ہدایات جاری کی ہیں۔چیف جسٹس اطہر من اللہ نے کہا کہ پی ٹی آئی مارچ کے وقت بھی ڈپٹی کمشنر کو اس وقت بھی ہم نے پابند کیاتھا کہ دھرنے والے اجازت لیں ورنہ نہیں کرسکتے، ڈسٹرکٹ مجسٹریٹ کا کام ہے کہ وہ دھرنے کوریگولیٹ کرے، آپ کی درخواست قبل از وقت ہے کیونکہ انہوں نے ابھی اجازت ہی نہیں مانگی نہ خلاف ورزی کی، قانون پرعمل درآمد کرانا اسلام آباد انتظامیہ کی ذمہ داری ہے، ابھی کچھ بھی نہیں ہوا اور اجازت کے بغیر کوئی دھرنا نہیں دے سکتا، احتجاج بنیادی حق ہے لیکن اس سے شہریوں کو پریشانی نہیں ہونی چاہیے۔عدالت نے درخواست گزار کو وکیل کرنے کے لیے ایک ہفتے کا وقت دیتے ہوئے سماعت ملتوی کر دی۔

بنگلادیش میں کھانے سے بال نکلنے پر شوہر نے بیوی کو گنجا کردیا

ڈھاکا: بنگلادیش میں ناشتے میں سے بال نکلنے پر غصے سے بھپرے ہوئے شوہر نے جبراً بیوی کے سر کو مونڈھ دیا۔بین الاقوامی خبر رساں ادارے کے مطابق بنگلا دیش میں شوہر نے معمولی غلطی پر 23 سالہ بیوی کو مارا پیٹا اور سر کے بال مونڈھ دیئے۔  پولیس نے فوری کارروائی  کرتے ہوئے 35 سالہ شوہر ببلو مونڈال کو حراست میں لے لیا ہے۔  بیوی کے ساتھ زور زبردستی، غیر انسانی سلوک اور مارپیٹ کے الزام میں ملزم کو 14 سال جیل ہوسکتی ہے۔پولیس ترجمان نے میڈیا کو بتایا کہ  گاؤں کے ایک رہائشی نے  واقعہ کی اطلاع دی۔ شوہر نے اقبالی بیان میں اعتراف کیا ہے کہ کھانے میں سے بیوی کا بال نکلا تھا جس پر غصے میں آکر اسے گنجا کردیا۔ بنگلادیش میں خواتین کے ساتھ نارواسلوک کے واقعات عام ہیں۔واضح رہے کہ  بنگلادیش میں رواں برس کے پہلے 6 ماہ میں 630 خواتین کو جنسی زیادتی کا نشانہ بنایا گیا جن میں 37 کو زیادتی کے بعد قتل کردیا گیا جب کہ 7 نے خودکشی کرلی تاہم کسی ملزم کو سزا نہیں ہوسکی۔

فیس بک کی دوستی انڈونیشین خاتون کو پاکپتن لے آئی

پاکپتن: انڈونیشین خاتون نے پاکپتن کے رہائشی نوجوان سے شادی کرکے فیس بک کو دوستی کو ازدواجی زندگی میں بدل لیا۔ایکسپریس نیوز کے مطابق سوشل میڈیا پر ہونے والی ایک اور دوستی ازدواجی زندگی میں بدل گئی اور انڈونیشین لڑکی نے پاکستان پہنچ کر نوجوان سے نکاح کر لیا۔تحصیل عارفوالا کے نواحی گاؤں 59 ای بی کے رہائشی نوجوان عامر سہیل کی انڈونیشین دوشیزہ دیوی فیری ولینڈیری سے فیس بک پر دوستی ہوئی جو محبت میں بدلی اور بعد میں شادی کے بندھن میں تبدیل ہوگئی۔نوبیاہتا جوڑے کے مطابق شادی کے بعد مقامی پولیس تنگ کررہی ہے، جس پر جوڑے نے ایڈیشنل سیشن کورٹ اسرار زادہ میں ایک درخواست دائر کردی ہے، جب کہ مقامی عدالت کی جانب سے کل مقامی پولیس کو پیش ہونے کی ہدایت کرتے ہوئے ڈی ایس پی سے واقعہ کی رپوٹ بھی طلب کر لی۔

شہرت کیلئے را بی پیر زادہ کے اوچھے ہتھکنڈے، لنگر خانے کھو ل کر غلط کیا ،وزیراعظم عمرا ن خان کو ہی بڑی بی بن کر مشورہ دیدیا

 

لاہو ر (ویب ڈیسک)شہرت حاصل کرنے کیلئے را بی پیر زادہ اوچھے ہتھکنڈو ں پر اتر آئی۔را بی پیر زادہ شو بزانڈسٹری کے اندر اتنا بڑا نا م نہیں مگر آگے بڑھنے کیلئے اژدھا ،سانپ ،مگر مچھ کے ساتھ تصاویر شئیر کرنا تو مہنگا پڑ ہی گیاتو اب محتر مہ نے اب ایک نیا شو شہ چھو ڑدیااور مودی کو کشمیر میں جا ری جا رحیت پر للکا را،اور خو د ہی مشہور کر دیا کہ را مجھے دھمکیاں دے رہا ہے۔کشمیر کا مسئلہ اب پو ری دنیا کا مسئلہ ہے اور یہ صا حبہ ابھی تک ان با تو ں سے ہٹ نہ ہوئی تو ایک نیا پنڈو را باکس کھو لدیاکہ وز یراعظم عمران خان نے لنگر خانے کھو ل کر غلط کیا ہے اور وزیراعظم کو ہی بڑی بی بن کر مشورہ دیدیا کہ لو گوں کو مانگ کر نہیں کما کر کھلا نا سکھائیں۔اتنے چھو ٹے نام کو یہ زیب نہیں دیتا کہ وہ مشہو ر ہونے کیلئے وزیراعظم پا کستان کو اپنے مشورے دیتی پھریں۔اس وقت را بی کشمیر جا کر کشمیریوں کی مدد کریں تو وہ سپر سٹا ر بن سکتی ہیں مگر اگر وہ یہ سمجھتی ہیں کہ میں وزیر اعظم پر تنقید کرکے سپر سٹا ر بن جاﺅنگی تو یہ انکی بڑی بھو ل ہو گی،کشمیر جائیں اور لو گو ں کی مدد کر یں کیونکہ را بی اس وقت شہرت کی بھوکی ہے اور ہٹ ہونے کیلئے کچھ بھی کرنے کیلئے تیا ر ہو جا تی ہے۔

بھارت میں سڑک چھاپ بھکاری لاکھوں کا مالک نکلا

ممبئی: (ویب ڈیسک)بھارت میں بھیک مانگ کر گزارا کرنے والے بھکاری کی جھگی سے 1 لاکھ 77 ہزار مالیت کے سکے ملے ہیں جب کہ بینک اکاؤنٹ میں بھی پونے 9 لاکھ سے زائد رقم موجود ہے۔بھارتی میڈیا کے مطابق ٹرین کی زد میں آکر ہلاک ہونے والے بھکاری کی شناخت ہوگئی ہے، 62 سالہ اربھی چند نامی شخص کا ریلوے اسٹیشن کے قریب ہی ایک چھوٹی سی جھگی میں بسیرا تھا۔ تلاشی کے دوران جھگی سے برتنوں اور تھیلوں میں چھپائے گئے سکے ملے ہیں جن کی کُل مالیت 1 لاکھ 77 ہزار تھی۔پولیس کا کہنا ہے کہ ان سکوں کو گننے میں کئی گھنٹے لگ گئے جب کہ جھگی سے بھکاری کے ایسے دستاویز بھی ملی ہیں جس سے اس کے بینک اکاؤنٹ کا پتا چلا جن میں 8 لاکھ 77 ہزار روپے موجود ہیں۔ دستاویز سے پتا چلا کہ وہ راجھستان کا رہائشی ہے جو کئی برس سے ممبئی میں رہائش پذیر تھا اور کبھی کبھی اپنے گھر جایا کرتا تھا۔

گوگل پکسل 4 رواں ماہ ریلیز کرنے کا اعلان، قیمت آئی فون11 سے بھی زائد

نیویارک: (ویب ڈیسک)گوگل فور نے اعلان کیا ہے کہ وہ اپنا نیا اسمارٹ فون اکتوبر کے وسط تک فروخت کے لیے پیش کررہا ہے لیکن خیال رہے کہ یہ فون آئی فون 11 سے بھی مہنگا ہوسکتا ہے۔گوگل فور کی اب تک ظاہر ہونے والی سب سے بڑی جدت موشن سینسر ہے جس کی بدولت آپ کو فون ٹچ کرنے کی ضرورت نہیں صرف دور سے ہوا میں ہاتھ ہلائیں اور فون کے فیچرز تک رسائی حاصل کرلیں۔ اسی کے ساتھ دوسرا اہم فیچر تھری ڈی فیس لاک اور ان لاک ہے یعنی یہ آپ کا چہرہ دیکھ کر اٹھے گا اور اسی طرح بند ہوگا۔اس سے قبل کمپنی نے جانتے ہوئے اس کی پشت پر لگے کیمروں کے راز افشا کیے تھے تاہم دنیا کے کسی اسمارٹ فون میں پہلی مرتبہ سولی ریڈار پر مشتمل موشن سینسر شامل کیے گئے ہیں جو زبردست اہمیت رکھتے ہیں۔ علاوہ ازیں تجزیہ کار ویب سائٹ اور یوٹیوب ماہرین نے دیگر فیچرز پر بھی بات کی ہے۔ان سب کے باوجود اب نئی بات یہ ہے کہ اس فون کی قیمت کے متعلق کچھ معلومات سامنے آئی ہیں۔ اس سے ظاہر ہوتا ہے کہ گوگل فور کی قیمت آئی فون الیون سے بہت زیادہ ہوسکتی ہے۔

گوگل پکسل فور کی قیمت کے بارے میں ماہرین نے جو اندازے لگائے ہیں ان کی روشنی میں سادہ پکسل فور 900 امریکی ڈالر اور ایکس ایل 1050 امریکی ڈالر سے شروع ہوسکتی ہے۔ اس ضمن میں 64 جی بی اور 128 جی بی کے ماڈلوں کی قیمت میں گنجائش اور اسٹوریج کا فرق ہوسکتا ہے۔اگر اس کا موازنہ آئی فون الیون سے کیا جائے تو آئی فون الیون 64 جی بی کی قیمت 700 ڈالر، 128 جی بی 750 ڈالر اور 256 جی بی کی قیمت 850 ڈالر ہے۔ اس طرح گوگل نے پکسل فور کی صورت میں مہنگا ترین فون پیش کیا ہے۔

مزید تفصیلات: سچ اور افواہ

عالمی تجزیہ کاروں نے کہا ہے کہ پکسل فور 15 اکتوبر میں نیویارک میں لانچ کیا جارہا ہے۔ یہ تین رنگوں میں دستیاب ہوگا اور اس میں 90 ہرٹز کا ڈسپلے شامل کیا گیا ہے۔ اسکرین سائز 5.7 انچ کا فل ایچ ڈی ہے جہاں تک کیمرے کی بات ہے تو اس میں پہلی مرتبہ گوگل نے ملٹی سینسر کیمرا لگایا ہے۔ کیمرے پر ڈی ایس ایل آر جیسا آپشن بھی ہے جس کے لیے ہارڈویئر الگ سے خریدنا ہوگااور اب ذکر ہوجائے بعض افواہوں کا جس کا اندازہ ماہرین نے ڈیزائن دیکھ کر لگایا ہے۔

گرنے کی صورت میں ازخود کال

کسی بھی حادثے کی صورت میں یہ فون پوری آواز سے الارم بجائے گا اور وائبریٹ کرے گا۔ اب اگرکوئی اسے بند نہیں کرتا تو یہ ازخود 911 فون کرکے اسے لوکیشن سے آگاہ کردے گا۔ اس فیچر کو گاڑی کے حادثے کی صورت میں شامل کیا گیا ہے تاہم یہ ابھی تک ایک قیاس ہے۔

ایک بہت اچھا گیمنگ فون

اس کے ڈسپلے ، اورنج پاور بٹن اور 90 ہرٹز کے ڈسپلے کی بنیاد پر شاید یہ بطورِ خاص گیمز کھیلنے کے لیے بھی تیار کیا گیا ہے۔ کچھ بلاگرز نے اس کی تصدیق بھی کی ہے۔

دو عدد بیک کیمرا

سلیش لیکس کی ویب سائٹ کے مطابق اس کی پشت پر دو جدید کیمرے ہوسکتے ہیں۔

آمدنی میں کمی دماغی صحت کے لیے نقصان دہ

اسلام آباد: (ویب ڈیسک)کیا آپ نے کبھی غور کیا ہے کہ موجودہ دور میں کم عمر افراد میں ذہنی امراض کی شرح میں بہت زیادہ اضافہ کیوں ہورہا ہے؟اس کی متعدد وجوہات ہوسکتی ہیں مگر سالانہ آمدنی میں کمی آنا بھی اس کا ایک بڑا سبب ہے۔ولمبیا میل مین اسکول آف پبلک ہیلتھ کی تحقیق میں بتایا گیا کہ جن نوجوانوں کو سالانہ آمدنی میں 25 فیصد یا اس سے زائد کمی کا سامنا ہوتا ہے ان میں درمیانی عمر میں سوچنے کے مسائل اور دماغی صحت میں خرابی کا خطرہ دیگر کے مقابلے میں زیادہ ہوتا ہے۔طبی جریدے جرنل نیورولوجی میں شائع تحقیق میں محققین کا کہنا تھا کہ آمدنی میں کمی میں 1980 کی دہائی سے ریکارڈ کمی آئی ہے اور ایسے شواہد مسلسل سامنے آرہے ہیں کہ اس کے صحت پر منفی اثرات مرتب ہوتے ہیں۔اس تحقیق میں امریکا سے تعلق رکھنے والے رضاکاروں کا جائزہ 30 برس سے زائد عرصے تک لیا گیا اور اس میں وہ عرصہ بھی شامل ہے جب 2000 کی دہائی کے آخر میں وہاں مالیاتی بحران کا سامنا لوگوں کو ہوا۔نتائج سے معلوم ہوا کہ جوانی کے ان ایام میں جب آمدنی کی شرح سب سے زیادہ ہوتی ہے، اس میں کمی آنا درمیانی عمر میں دماغی عمر کو بدتر بنادیتا ہے۔اس تحقیق کے آغاز میں 23 سے 35 سال کی عمر کے 3 ہزار سے زائد افراد کو شامل کیا گیا تھا اور ان سے 1990 سے 2010 تک ہر 3 سے 5 سال بعد آمدنی کے اعدادوشمار درج کرانے کی ہدایت کی گئی۔محققین نے دیکھا کہ اس عرصے میں آمدنی میں کمی کا سامنا 14 سو زائد افراد کو ہوا، جن میں سے 1108 کی آمدنی 25 فیصد یا اس سے زائد کم ہوئی جبکہ 399 کی آمدنی میں اس طرح 2 یا اس سے زائد بار کمی آئی۔پھر ان افراد کو سوچنے اور یاداشت کے ٹیسٹوں سے گزارا گیا تو دریافت ہوا کہ آمدنی کا 2 یا اس سے زائد بار کمی کا سامنا کرنے والے افراد کے ٹیسٹ کے اسکور بدتر تھے۔محققین نے 707 افراد کے دماغی اسکین ایم آر آئی کے ساتھ کیے اور دریافت کیا کہ جن افراد کی آمدنی میں کمی آئی ان کا دماغی حجم آمدنی برقرار رکھنے والے افراد کے مقابلے میں چھوٹا تھا۔ایک یار آمدنی میں کمی کا سامنا کرنے والے افراد کو بھی دماغی کنکٹیویٹی کی کمی کا سامنا ہوا۔

جے یو آئی (ف) کے آزادی مارچ سے قبل ہی مدارس کی نگرانی شروع

اسلام آباد: (ویب ڈیسک)وفاقی دارالحکومت میں سیاسی مذہبی جماعت کی آزادی مارچ سے نمٹنے کی حکمت عملی تیار کرنے کے لیے اسلام آباد میں جمعیت علمائے اسلام (ف) کے قائدین اور مدارس کی نگرانی شروع کردی گئی۔ڈان اخبار کی رپورٹ کے مطابق دارلحکومت کی انتظامیہ کی ہدایت پر پولیس نے اپنی خصوصی برانچ کو الرٹ کردیا کہ وہ جے یو آئی (ف) سے منسلک مدارس، اساتذہ اور طلبہ سے متعلق معلومات اکٹھا کرے، اس کے علاوہ وہ مدارس، اساتذہ اور طلبہ جو جے یو آئی (ف) کی حمایت کرسکتے ہیں ان کی بھی شناخت کی جانی چاہیے۔اس سلسلے میں معلومات کے حصول کے لیے مدارس کے اندر اور باہر انٹیلی جنس کا کام شروع کردیا گیا ہے۔عہدیداروں کو مدارس کے اطراف تعینات کردیا گیا ہے اور وہ مدارس آنے والے افراد کی نگرانی کر رہے اور ان کی فہرست بنا رہے، اس کے علاوہ اساتذہ اور سینئر طلبہ کی بھی نگرانی کی جارہی کہ وہ ان دنوں میں کس سے رابطہ اور ملاقات کر رہے ہیں۔عہدیدار نے بتایا کہ لوگوں سے متعلق معلومات حاصل کی جارہی ہے اور جو جے یو آئی (ف) اور دیگر سیاسی مذہبی جماعتوں سے منسلک پائے گئے ان کو نگرانی میں رکھا گیا ہے تاکہ جب ضرورت پڑے تو ان کے خلاف کارروائی کی جاسکے۔اس حوالے سے عہدیداروں کا کہنا تھا کہ وفاقی دارالحکومت میں 329 مدارس ہیں اور یہ امکان ہے کہ جے یو آئی (ف) کو 207 مدارس سے افرادی قوت سمیت حمایت حاصل ہوجائے، ساتھ ہی انہوں نے یہ بھی بتایا کہ 28 ہزار طلبہ ان مدارس میں تعلیم حاصل کر رہے ہیں۔علاوہ ازیں مولانا فضل الرحمٰن، مولانا عطاالرحمٰن، مفتی ابرار، خواجہ مدثر اور مجید ہزاروی کی بھی نگرانی شروع کردی گئی اس کے علاوہ مولانا فضل الرحمٰن کے اسٹاف میمبر کو بھی مانیٹر کیا جارہا ہے۔عہدیداروں نے بتایا کہ رینٹ اے کار سروس فراہم کرنے والے، ہوٹلز اور کیٹرنگ سروسز کی بھی نگرانی شروع کردی گئی ہے اور دیکھا جارہا کہ کون لوگ وہاں آرہے ہیں۔دوسری جانب مینٹینینس آف پبلک آرڈر یا کرمنل پراسیجر کوڈ (سی آر پی سی) کو جے یو آئی (ف) کے رہنماؤں، اساتذہ اور طلبہ کے خلاف استعمال کیا جاسکتا ہے تاکہ انہیں لانگ مارچ میں شرکت کے لیے تیاریوں سے روکا جاسکے۔اس کے علاوہ سی آر پی سی کو لانگ مارچ کے منتظمین، قائدین اور شرکا کو سروس فراہم کرنے والوں کے خلاف بھی استعمال کیا جاسکتا۔ادھر ایک پولیس افسر کا کہنا تھا کہ دارالحکومت کی پولیس نے اپنی نئی تیار کردہ حکمت عملی کو جانچنے کے لیے بڑی انسداد فسادات مشق شروع کردی ہے۔انہوں نے بتایا کہ یہ مشق جے یو آئی (ف) کی جانب سے 27 اکتوبر سے حکومت مخالف آزادی مارچ کے آغاز کے اعلان کے بعد سے شروع کی گئی۔خیال رہے کہ نومبر 2017 میں تحریک لبیک پاکستان نے پولیس کو پیچھے دکھیلتے ہوئے فیض آباد کے مقام پر اپنا دھرنا جاری رکھا تھا، بعد ازاں اسلام آباد پولیس کے انسپکٹر جنرل (آئی جی) کا چارج سنبھالنے والے سلطان اعظم تیموری نے دسمبر 2017 میں انسداد فسادات یونٹ (اے آر یو) اور پولیس ریزرو متعارف کروایا تھا۔

احسن خان آج پنی 38ویں سالگرہ منا رہے ہیں

کراچی : (ویب ڈیسک) شائقین کے دلوں میں بسنے والے فلم اور ٹیلی ویژن کے مشہور اداکاراور میزبان احسن خان آج اپنی 38ویں سالگرہ منا رہے ہیں ۔دھیمہ لہجہ ،،جاندار اداکاری  اور سحر انگیز شخصیت ،،موجودہ دور کے ہر دل عزیز فنکاراحسن  خان  38 برس کے ہوگئے۔فلم ہو یا ڈرامہ سیریلز  ،کردار رومانوی ہو یا ایکشن سے بھرپور ، احسن خان  نے اپنے مداحوں کہیں بھی مایوس نہیں کیا ۔احسن خان نے اپنے فنی سفر کا آغاز دو  دیہائی قبل سپر ہٹ لالی وڈ فلم  “نکاح” سے کیا اور شان اور ریما جیسے  بڑےاسٹارز  کے ہوتے ہوئے بھی اپنی موجودگی  احساس دلایا۔لو ان ہالینڈ ،  گھر کب آؤگے، چھپن چھپائی احسن خان  کی مشہور فلمیں ہیں  ۔ چھوٹے  پردے  پر بھی انہوں نے خوب  کامیابیاں سمیٹیں ،اڈاری، کبھی کبھی ، موسم ، مجھے خدا پر یقین  ہے ، گوہر نایاب اور الف احسن کے مشہور ٹی وی سیریلزہیں  ۔احسن خان بچوں کے حقوق کیلئے آواز اٹھانے  کےحوالے سے بھی پہچان رکھتے ہیں ، یہی وجہ  ہے انھیں رواں سال جولائی میں چلڈرن لٹریچر فیسٹول کا خیرسگالی کا سفیر بھی بنایا گیا ۔

خالصتان تحریک میں پاکستان ملوث نہیں، برطانیہ

لندن: (ویب ڈیسک)برطانیہ نے خالصتان تحریک میں پاکستان کے ملوث ہونے کو یکسر مسترد کر دیا۔ برطانوی حکومت کا کہنا ہے کہ بھارتی حکومت اور میڈیا کا رویہ سکھ علیحدگی پسندی کو ہوا دے رہا ہے۔دت پسندی کے خلاف برطانوی حکومت کے کمیشن کی رپورٹ جاری کر دی گئی جس میں واضح طور پر کہا گیا ہے کہ خالصتان تحریک کے پیچھے پاکستان کا ہاتھ نہیں ہے۔رپورٹ میں بتایا گیا کہ بھارت کی طرف سے سکھ خالصتان تحریک کو دہشت گردی قرار دینے پر سکھوں میں شدید تشویش پائی جاتی ہے۔ اسی وجہ سے برطانیہ میں مقیم ہندوئوں اور سکھوں کے درمیان تنائو کی صورتحال پیدا ہو چکی ہے۔رپورٹ کے مطابق گولڈن ٹیمپل حملے کے بعد سے خالصتان کے مطالبے میں شدت آئی ہے، سکھوں کی اکثریت علیحدہ ملک کا قیام چاہتی ہے جبکہ بھارتی حکومت اور میڈیا کا رویہ بھی سکھ علیحدگی پسندی کو ہوا دے رہا ہے۔رپورٹ میں مطالبہ کیا گیا ہے کہ سکھوں کو انتہا پسند اور دہشت گرد قرار دئیے بغیر انہیں الگ ملک کے قیام پر بحث کی اجازت دی جائے۔