All posts by Saqib Nasir

26 جولائی سے انٹر کے سالانہ امتحانات شیڈول کے مطابق ہوں گے ، پروفیسر ڈاکٹر سعید الدین

چیئرمین اعلیٰ ثانوی بورڈ کراچی پروفیسر ڈاکٹر سعید الدین نے کہا کہ 26 جولائی سے انٹر کے سالانہ امتحانات شیڈول کے مطابق ہوں گے۔

تفصیلات کے مطابق چیئرمین اعلیٰ ثانوی بورڈ کراچی پروفیسر ڈاکٹر سعید الدین نے کہا کہ انٹر کے امتحانات کی تمام تیاریاں مکمل ہوچکی ہیں ، ایڈمٹ کارڈ اورڈیٹ شیٹ کا اجراء پہلے ہی مکمل ہوچکا ہے۔

انہوں نے کہا کہ محکمہ تعلیم حکومت سندھ کے فیصلے پر عمل کیا جائے گا ، تمام امیدوار امتحانات کے حوالے سے کسی ابہام کا شکار نہ ہوں۔

چیئرمین اعلیٰ ثانوی بورڈ کراچی پروفیسر ڈاکٹر سعید الدین نے کہا کہ دوران امتحانات ایس او پیز پر مکمل عمل درآمد کیا جائے گا ، بورڈ کاعملہ اور اساتذہ کی  ویکیسنشن پہلے ہی مکمل ہو چکی ہیں۔

مشیرقومی سلامتی معیدیوسف نے بھارت کو دہشت گرد قراردیدیا

مشير قومی سلامتی معيد يوسف نے بھارت کو دہشت گرد اور مودی کو ’’نیا ہٹلر‘‘ قرار دے ديا۔ بھارتی ٹی وی کو انٹرويو ميں کہا کہ ہم جانتے ہيں بھارت پاکستان ميں دہشت گردی کو ہوا دے رہا ہے، اجیت دوول سے ملاقات کی بھی تردید کردی۔

مشیر قومی سلامتی معید یوسف نے بھارت کو دہشت گرد قرار دیدیا، بھارتی میڈیا کو دیئے گئے انٹرویو میں ان کا کہنا تھا کہ بھارت دہشت گردی کو ہوا دے رہا ہے، بھارت جان لے یہ کسی صورت قبول نہیں۔

انہوں نے کہا کہ آگے بڑھنے کیلئے بھارت کو 5 اگست کا اقدام واپس لینا ہوگا، بھارتی حکام سے ہمارا ايک ہی سوال ہے کہ کشمیر سے متعلق اقدام واپس لينے کیلئے کيا کيا۔

مشیر قومی سلامتی کا کہنا ہے کہ بھارت تنازع کشمیر حل کرنے کیلئے تیار ہوگا تو ہی بات ہوگی، ہر پاکستانی آخری وقت تک کشمیریوں کیساتھ کھڑا ہے، بھارت کو کشمیر سے متعلق یکطرفہ اقدامات واپس لینا ہوں گے۔

معید یوسف نے یہ بھی کہا کہ امن خراب کرنے کیلئے بھارتی تخریب کاری کے ثبوت موجود ہیں، لاہور دھماکے کے تانے بانے بھی بھارت سے جڑتے ہیں، مودی حکومت آر ایس ایس اور فاشسٹ ایجنڈے پر عمل پیرا ہے۔

مشیر قومی سلامتی معيد يوسف نے اپنے بھارتی ہم منصب اجيت دوول سے ملاقات کی بھی تردید کردی

پیگاسس سے جاسوسی سالمیت پر حملہ ہے، قانونی چارہ جوئی کرینگے، مشیر داخلہ

وزیراعظم عمران خان کے مشیر برائے احتساب و داخلہ شہزاد اکبر کا کہنا ہےکہ بھارت کی جانب سے اسرائیلی کمپنی کے ‘پیگاسس’ اسپائی ویئر سے جاسوسی پاکستان کی سالمیت پر حملہ ہے، بھارت کے خلاف قانونی چارہ جوئی کریں گے۔

اسلام آباد میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے شہزاد اکبرکا کہنا تھا کہ بھارت نے اسپائی ویئر سے2019 میں عمران خان کے فون پر حملہ کیا، پاکستان کے اعلیٰ عسکری حکام کو بھی ٹارگٹ کیا گیا، معاملے کو منطقی انجام تک پہنچائیں گے۔

شہزاد اکبرکا کہنا تھا کہ وزیراعظم کو بھی ٹارگٹ کیا گیا ان کا فون ہیک کرنےکی کوشش کی گئی ،معاملے کی اعلیٰ سطح پر تحقیقات کرائیں گے اور اس کو اقوام متحدہ اور دیگر عالمی فورمز پر شیئرکیا جائےگا،مشاورت ہو چکی ہے، تحقیقات کا رواں ہفتے نوٹی فکیشن جاری ہوگا۔

مشیر داخلہ کا کہنا تھا کہ اسپائی ویئرکا معاملہ پاناما لیکس سے بھی بڑا ہے، ہمیں پاکستان کی سالمیت اور خودمختاری کی حفاظت کرنی ہے ۔

خیال رہےکہ امریکی اخبار نے جاسوسی کے اسرائیلی نظام سے پاکستان سمیت کئی ملکوں کی شخصیات کےفون ہیک کیے جانےکا انکشاف کیا ہے۔

رپورٹ کے مطابق بھارت اسرائیلی کمپنی کے سافٹ ویئر ‘پیگاسس ‘ کے ذریعے وزیراعظم عمران خان سمیت کابینہ ارکان کی فون کالز اور میسجز ریکارڈکرنےکی کوشش کرتا رہا ہے۔

امریکی اخبارکی رپورٹ کے مطابق بھارت  اسرائیلی کمپنی کا صارف ہے اور بھارتی حکومت کے پاس جاسوسی،نگرانی اورڈی کوڈ کرنےکی صلاحیت ہے ، بھارت کی جانب سے اپنے اپوزیشن لیڈر راہول گاندھی سمیت پاکستانی وزیراعظم عمران خان کا پرانانمبر بھی ہیک کرنےکی کوشش کی گئی۔

‘ہر پاکستان دشمن سے ان کی دوستی ہے’، افغان رہنما سے نواز شریف کی ملاقات پر وفاقی وزرا کی تنقید

حکمراں جماعت پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے کئی وزرا نے مسلم لیگ (ن) کے قائد اور سابق وزیر اعظم نواز شریف پر افغانستان کے قومی سلامتی کے مشیر حمداللہ محب سے ملاقات کرنے پر کڑی تنقید کرتے ہوئے کہا ہے کہ اس سے ‘پاکستان کے دشمنوں سے ان کے تعلقات ثابت ہوتے ہیں’۔

واضح رہے کہ لندن میں مقیم سابق وزیر اعظم نواز شریف سے افغان سلامتی امور کے مشیر حمد اللہ محب اور افغانستان کے وزیر مملکت برائے امن سید سعادت نادری نے ملاقات کی۔

سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر بیان جاری کرتے ہوئے افغانستان کے قومی سلامتی کونسل کا کہنا ہے کہ سابق وزیر اعظم نواز شریف سے ملاقات میں باہمی دلچسپی کے امور پر تبادلہ خیال کیا گیا۔

اس ملاقات کے بارے میں وفاقی وزیر اطلاعات فواد چوہدری نے ردعمل دیتے ہوئے کہا ہے کہ ‘نواز شریف کو پاکستان سےباہر بھیجنا اس لیے خطرناک تھا کہ ایسے لوگ بین الاقوامی سازشوں میں مددگار بن جاتے ہیں’۔

ان کا کہنا تھا کہ ‘نواز شریف کی افغانستان میں را (بھارتی خفیہ ایجنسی) کے سب سے بڑے حلیف حمداللہ محب سے ملاقات ایسی ہی کاروائی کی مثال ہے’۔

انہوں نے دعویٰ کیا کہ ‘نریندر مودی، محب یا امراللہ صالح، ہر پاکستان دشمن نواز شریف کا قریبی دوست ہے’۔

وفاقی وزیر برائے انسانی حقوق شیریں مزاری نے سوال کیا کہ ‘باہمی دلچسپی کے معاملات’ کیا ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ‘محب اللہ کی جانب سے ہمارے ملک پاکستان کو ‘کوٹھا’ کہنے کے بعد مشترکہ مفاد صرف پاکستان پر حملہ کرنا ہی ہوسکتا ہے، لوٹی ہوئی دولت کے تحفظ کے لیے شریف خاندان کی مفاد پرستی شرمناک ہے’۔

وزیر مملکت شہریار آفریدی نے دعوٰی کیا کہ ‘افغان این ایس اے کے ساتھ نواز شریف کی ملاقات نے پاکستان کے دشمنوں سے ان کے رابطوں کو ثابت کیا’۔

انہوں نے کہا کہ اس ملاقات نے ثابت کردیا کہ سابق وزیر اعظم پاکستانی مفادات کے خلاف استعمال ہونے والا آلہ تھے۔

ان کا کہنا تھا کہ نواز کے بیانات بین الاقوامی فورمز پر بھارت پہلے ہی ‘استعمال’ کرچکا ہے۔

وفاقی وزیر برائے سائنس اینڈ ٹیکنالوجی شبلی فراز نے اس ملاقات کے بارے میں ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ ‘یہ کوئی نئی بات نہیں’۔

انہوں نے کہا کہ نواز نے ‘ہمیشہ پاکستان کے دشمنوں کا ساتھ دیا خواہ وہ (اسٹیل ٹائکون سجن) جندال ہو یا نریندر مودی’۔

ان کا کہنا تھا کہ کل ہونے والے آزاد جموں و کشمیر کے انتخابات میں خطے کے عوام مسلم لیگ (ن) کو مسترد کریں گے۔

واضح رہے کہ حال ہی میں دفتر خارجہ نے افغانستان کے قومی سلامتی کے مشیر حمداللہ محب پر افغان امن عمل میں ہونے والی پیشرفت کو ختم کرنے کی کوشش کا الزام عائد کیا تھا۔

حمد اللہ محب کے وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کے افغانستان کے ‘طلوع نیوز’ کو دیے گئے انٹرویو کے متعلق ٹوئٹ پر ردعمل میں دفتر خارجہ نے کہا کہ ‘بار بار غیر مہذب اور غیر ضروری ریمارکس اب تک امن عمل میں ہونے والی پیشرفت کو نظرانداز اور ختم کرنے کی سوچی سمجھی کوشش کے مترادف ہیں’۔

افغان مشیر قومی سلامتی نے اپنے ٹوئٹ میں کہا تھا کہ شاہ محمود قریشی نے اس وقت انٹرویو دیا ہے جب طالبان کی طرف سے ملک بھر میں افغان عوام کے خلاف کشیدگی میں اضافہ ہوا ہے، ہمیں معلوم ہے کہ وہ کیوں اور کیسے ایسا کرنے میں کامیاب ہو رہے ہیں، شاہ محمود قریشی یا تو لاعلم، نادان یا ساتھی ہیں، وہ شاید اس سے بھی انکار کر دیں کہ اسامہ بن لادن، پاکستانی عسکری ہیڈکوارٹرز کے برابر میں مقیم تھا’۔

حمد اللہ محب اور دفتر خارجہ کے درمیان تلخ کلامی کا آغاز افغان مشیر قومی سلامتی کے گزشتہ ماہ پاکستان کے خلاف دُشنام طرازی سے ہوا تھا۔

اسلام آباد نے ان توہین آمیز ریمارکس پر بطور احتجاج حمد اللہ محب سے تمام سرکاری روابط ختم کر دیے تھے۔

افغان مشیر قومی سلامتی کے پاکستان کے خلاف ریمارکس

واضح رہے کہ گزشتہ مہینے وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے پاکستان کے خلاف اپنے ریمارکس پر حمداللہ محب پر تنقید کی تھی اور ان سے اپنے طرز عمل کی ‘عکاسی اور اصلاح’ کرنے کا مطالبہ کیا تھا۔

ان کا کہنا تھا کہ افغانستان کے قومی سلامتی کے مشیر ‘غور سے میری بات سنیں … پاکستان کے وزیر خارجہ کی حیثیت سے میں یہ کہتا ہوں کہ اگر آپ جو زبان استعمال کررہے ہیں یا الزامات لگارہے ہیں اگر اس سے باز نہیں آتے ہیں تو کوئی پاکستانی آپ کا ہاتھ نہیں ملائے گا یا آپ سے بات نہیں کرے گا’۔

وائس آف امریکا کی ایک رپورٹ کے مطابق وزیر خارجہ مئی میں صوبہ ننگرہار کے دورے کے موقع پر افغان قومی سلامتی کے مشیر کے ریمارکس کا جواب دے رہے تھے جس دوران افغان مشیر قومی سلامتی نے پاکستان کو ‘کوٹھا’ کہا تھا۔

وزیر خارجہ نے کہا تھا کہ ‘آپ کو شرم آنی چاہیے اور آپ کی باتوں پر آپ کو شرمندہ ہونا چاہیے، ننگرہار میں آپ کی تقریر کے بعد سے ہی میرا خون کھول رہا ہے’۔

ان کا کہنا تھا کہ ‘اپنے طرز عمل کو درست کریں اور اس پر غور کریں، میں بین الاقوامی برادری سے یہ کہتا ہوں کہ اگر یہ طرز عمل جاری رہا تو پھر یہ شخص جو اپنے آپ کو افغانستان کا قومی سلامتی کا مشیر کہتا ہے حقیقت میں (امن کے لیے) ایک بگاڑ کا کردار ادا کرے گا’۔

وزیر داخلہ کی نوازشریف کو وطن واپسی کی صورت میں فوج کی سکیورٹی دینے کی پیشکش

لاہور: وفاقی وزیر داخلہ شیخ رشید نے نواز شریف کو وطن واپسی کی صورت میں فوج اور رینجرز کی سکیورٹی دینے کی پیشکش کردی۔

لاہور میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے شیخ رشید نے کہا کہ کل شام لال حویلی سے تحریک انصاف کی فتح کا اعلان کروں گا اور پھر قوم اپوزیشن کا رونا پیٹنا سنیں گے جب کہ پیپلز پارٹی کو کشمیر میں (ن) لیگ سے زیادہ سیٹیں مل جائیں گی۔

انہوں نے کہا کہ کشمیر میں سب کو یک زبان ہونا چاہیے تھا، پوری قوم کو کشمیر کی آزادی میں ایک ہونا چاہیے، پاکستان کشمیریوں کی آزادی کی جدوجہد میں ساتھ ہے اور عمران خان کشمیر کا کیس دنیا میں اجاگر کرے گا۔

وزیر داخلہ نے نوازشریف کو وطن واپسی پر فوج اور رینجرز کی سکیورٹی دینے کی پیشکش کرتے ہوئے کہا کہ مریم نواز صاحبہ کو مفت مشورہ دے رہا ہوں، نوازشریف کو شام کو چارٹر بھیجتا ہوں آپ اچھی حالت میں واپس آجائیں، نواز شریف صبح اعلان کریں شام کو وطن واپس لانے کے لیے طیارہ بھیجوں گا۔

وزیر داخلہ کا کہنا تھا کہ مریم نواز کی زبان ان کی سیاست تباہ کردے گی، نواز شریف اور اس کے خاندان نے قوم کو سزا دی، نواز شریف اور ان کی بیٹی اپنی زبان کی وجہ سے مار کھائیں گے، نوازشریف جس تکلیف میں ہیں وہ انہوں نے خود منتخب کی، سوشل میڈیا کہہ رہاہے کہ نوازشریف سے را کے ایجنٹ مل رہے ہیں، آپ مودی کے ساتھ پگڑیاں بدلتے ہیں آپ کہاں کے کشمیری ہیں، کشمیری ڈوگرا راج سے لڑرہے ہیں اور ہر روز نوجوان شہید ہورہے ہیں،کشمیری آزادی سے کم پیچھے نہیں ہٹے گا۔

انہوں نے مزید کہا کہ داسو ڈیم پر جلد کام شروع ہوگا، داسو اور بھاشا ڈیم ملک کی معیشت کی تقدیر بدل دے گا، چین سے پاکستان کی دوستی لازوال ہے۔

علی رحمان بہترین دوست ہیں ان سے شادی کرنا چاہوں گی: ہانیہ

معروف اداکارہ ہانیہ عامر نے اداکار علی رحمان کے حوالے سے کہا کہ وہ ان سے شادی کرنا چاہیں گی کیونکہ علی ان کے بہترین دوست ہیں۔

ہانیہ عامر کے ایک انٹرویو کا چھوٹا سا کِلپ انسٹاگرام پر وائرل ہے جس میں انہیں تین اداکاروں علی رحمان خان، شہریار منور اور اذان سمیع خان کے حوالے سے آپشنز دیے گئے کہ وہ ان میں سے کسے قتل کریں گی، کس کے ہمراہ ڈیٹ پر جانا چاہیں گی اور کس سے شادی کریں گی۔

اداکارہ سوال سنتے ہی سوچ میں مبتلا ہوگئیں اور کچھ دیر میں جواب دیا کہ میں شہریار منور کو قتل کرنا چاہوں گی کیونکہ انہیں میں جانتی نہیں ہوں۔

ہانیہ نے کہا کہ اگر اذان سمیع خان مجھ سے پوچھتے ہیں تو میں ان کے ساتھ ڈیٹ پر جانا چاہوں گی کیونکہ میرے پاس دوسرا کوئی آپشن موجود نہیں ہے۔

آخر میں اداکارہ ہانیہ عامر نے علی رحمان کا نام لیتے ہوئے کہا کہ میں ان سے شادی کروں گی کیونکہ وہ میرے بیسٹ فرینڈ ہیں۔

اندرون ملک ہوائی سفر کیلئے کورونا ویکسی نیشن سرٹیفکیٹ لازمی قرار

اسلام آباد: نیشنل کمانڈ اینڈ آپریشن سینٹر (این سی او سی) نے اندرون ملک ہوائی سفر کیلئے کورونا ویکسی نیشن سرٹیفکیٹ کو لازمی قرار دے دیا۔

این سی او سی کے ٹوئٹر اکاؤنٹ سے جاری بیان میں کہا گیا ہےکہ یکم اگست سے اندرون ملک ہوائی سفر کیلئے کورونا ویکسی نیشن سرٹیفکیٹ لازم ہے لہٰذا پریشانی سے بچنے کیلئے 31 جولائی تک ویکسین لگوائیں اور ویکسی نیشن سرٹیفکیٹ حاصل کریں۔

این سی او سی کا کہنا ہےکہ ویکسی نیشن سرٹیفکیٹ کی پابندی 18 سال اور اس سے زائد عمر والوں کے لیے ہے، پاکستان آنے والے اورپاکستان سے بیرون ملک جانے والے افراد پابندی سے مستثنیٰ ہوں گے جب کہ جزوی ویکسی نیشن کرانے والوں، غیر ملکی شہریوں پربھی پابندی کااطلاق نہیں ہوگا۔

این سی او سی کے مطابق بیرون ملک سے ویکسی نیشن کرانےکا ثبوت رکھنے والوں پربھی پابندی کا اطلاق نہیں ہوگا جب کہ ری ایکشن کے باعث ویکسی نیشن سے روکےگئے افراد پابندی سے مستثنی ہیں۔

واضح رہےکہ ملک میں کورونا کے پھیلاؤ کو روکنے کے لیے ویکسی نیشن کو لازمی قرار دیا گیا ہے جب کہ سندھ حکومت نے ایک ہفتے میں ویکسی نیشن نہ کرانے والے شہریوں کی موبائل سمز بند کرنے کی بھی تجویز دی ہے۔

عید پر لودشيڈنگ نہ کر نیکی دھجیاں ،فیسکو چیف معطل

لیسکو کے چیف انجیئر بشیر گجر قائم مقام چیف الگیزیکٹو فیسکو تعینات ،حکومتی احکامات پر عملدرآمد نہ کرنیوl لوں کو برداشت نہیں کریں گے دیگر زمہ داروں کيخلاف بھی ایکشن ہوگا : حامد اظہر

عید کے روز خراب فیڈرز کی مرمت میں تاخیر بر تنے پر بھی انکوئری کا فیصلہ بجلی کی تقسیم کار کمپنیوں میں چیف الگیز یکٹو آفیسر کی بجائے بورڈ آف ڈائر یکٹرز کو اختیارات تفوےض،ارشد منیروڑائچ کو بھی اسی فیصلے کی روشنی میں عہدہ سے ہٹایا گیا

اپوزیشن لیڈر نے کشمیر میں ریفرنڈم کروانے کا وزیراعظم کا بیان مسترد کر دیا

پاکستان مسلم لیگ (ن) کے صدر اور قومی اسمبلی میں قائد حزب اختلاف شہباز شریف نے آزاد کشمیر میں ریفرنڈم کروانے کا وزیراعظم عمران خان کا بیان مسترد کر دیا۔

وزیراعظم عمران خان کے بیان پر ردعمل دیتے ہوئے شہباز شریف کا کہنا تھا کہ عمران نیازی آزاد کشمیر میں ریفرنڈم کی بات کر کے پاکستان کے تاریخی اور آئینی مؤقف سے انحراف کر رہے ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ تنازع جموں و کشمیر پر پاکستان کے تاریخی مؤقف اور اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی قراردادوں سے ہٹ کر مؤقف کو پوری قوم مسترد کرتی ہے۔

شہباز شریف نے مزید کہا کہ عمران نیازی کے بیان سے وہ خدشات ثابت ہو گئے ہیں جو 5 اگست 2019 کے بھارتی اقدامات سے قوم کے سامنے پہلے ہی آچکے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ تنازع جموں و کشمیر کا فیصلہ اقوام متحدہ کی نگرانی میں شفاف، آزادانہ استصواب رائے کے ناقابل تنسیخ حق سے ہو گا، پاکستان اور کشمیر کے عوام کا یہی مؤقف ہے۔

قائد حزب اختلاف کا کہنا تھا کہ کشمیریوں کی مرضی اور مشاورت کے بغیر کوئی حل ان پر مسلط کرنا بھارت کی مدد کرنا اور کشمیر کاز سے غداری کے مترادف ہے۔

سابق سفیر کی بیٹی نور مقدم کی پوسٹ مارٹم رپورٹ آ گئی

 جنوبی کوریا میں سابق پاکستانی سفیر شوکت مقدم کی صاحب زادی نور مقدم قتل کیس میں پوسٹ مارٹم رپورٹ آ گئی۔

ذرائع کے مطابق پولیس کو موصول ہونے والی پوسٹ مارٹم رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ مقتولہ کی موت دماغ کو آکسیجن سپلائی بند ہونے سے ہوئی، مقتولہ کے جسم پر تشدد کے متعدد نشانات بھی پائے گئے ہیں۔

رپورٹ کے مطابق مقتولہ کا سر دھڑ سے الگ کیا گیا، مقتولہ کے گھٹنے کے نیچے کے حصے پر زخموں کے متعدد نشان ہیں، مقتولہ کے جسم پر متعدد مقامات پر چاقو کے گہرے زخم ہیں۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ مقتولہ کے معدے سے لیا گیا مواد بھی فارنزک کے لیے لیبارٹری بھجوایا گیا ہے، تاہم اس کی رپورٹ پولیس کو تاحال موصول نہیں ہوئی ہے۔

پولیس نے اس کیس میں ایک مشتبہ ملزم ظاہر جعفر کو حراست میں لے رکھا ہے، جس کا نام ای سی ایل میں ڈالنے کے لیے پروسیس شروع کر دیا گیا ہے، ذرائع کا کہنا ہے کہ چیف کمشنر آفس آنے والی درخواست وزارت داخلہ بھجوائی جا چکی ہے اور اب وزرات داخلہ کابینہ کمیٹی سے منظوری کے بعد اس کا نام ای سی ایل میں شامل کرے گی۔

واضح رہے کہ عید کی رات وفاقی دارالحکومت اسلام آباد کے علاقے سیکٹر ایف سیون سے ایک سربریدہ لاش ملی تھی، جسے سابق سفیر شوکت مقدم کی 27 سالہ بیٹی نور مقدم کے نام سے شناخت کیا گیا، پولیس کے بیان کے مطابق جب اطلاع پر اہل کار وہاں پہنچے تو انھیں ہاتھ پاؤں بندھا ملزم ظاہر جعفر بھی ملا، جو نشے میں نہیں تھا۔

تاحال یہ واضح نہیں ہو سکا ہے کہ پولیس کو اطلاع کس نے دی تھی، ملزم کے ہاتھ پاؤں کس نے باندھے، یہ بھی معلوم ہوا ہے کہ نور مقدم اور ملزم جعفر آپس میں دوست تھے، مقتولہ دو دن قبل دوستوں کے ہمراہ لاہور جانے کے لیے گھر سے والد اور والدہ کی غیر موجودگی میں نکلی تھی، لیکن پھر وہ جعفر کے گھر گئی اور دو دن تک اسی کے گھر پر رہی۔

پولیس کا کہنا ہے کہ نور کی گردن آری سے نہیں، بلکہ چھری سے بے دردی سے کاٹی گئی تھی، پولیس کا یہ بھی کہنا ہے کہ ملزم برطانیہ میں رہا ہے، آئی جی اسلام آباد قاضی جمیل کی ہدایت پر ملزم کا بیرون ممالک انگلینڈ ،امریکا سے بھی کریمنل ریکارڈ لیا جائے گا۔

ایس ایس پی انوسٹیگیشن عطاالرحمان نے نیوز بریفنگ میں کہا تھا کہ یہ کیس ہمارے لیے بہت اہمیت کا حامل ہے، واقعہ عید کی رات کو ہوا، جب ملزم کو پکڑا تو وہ ہوش و حواس میں تھا، ملزم نے انتہائی غلط اقدام کیا ہے، وہ جسمانی ریمانڈ پر تحویل میں ہے، اور ملزم سے آلہ قتل بھی برآمد کیا جا چکا ہے۔

خیال رہے کہ پولیس کا کہنا ہے کہ ملزم ظاہر جعفر نے نور مقدم کو قتل کیا ہے، تاہم اس کیس میں کئی سوالات کھڑے ہو چکے ہیں جن کے جوابات پولیس نے ابھی تک فراہم نہیں کیے، جب موقع پر کوئی عینی شاہد نہیں تھا تو پولیس کو اطلاع دینے والے کون تھے؟ پولیس پہنچی تو ہاتھ پاؤں بندھا ملزم ملا، اس کے ہاتھ پاؤں کس نے باندھے؟ نور اور ملزم میں جھگڑا ہوا تو کس بات پر؟ اگر ملزم نشے میں نہیں تھا تو اس نے اتنی بے دردی سےگردن کیوں کاٹی؟

دوسری طرف سابق سفرا کی تنظیم نے اس واقعے پر شدید رد عمل ظاہر کیا ہے، سابق سفرا نے بیان میں کہا ہے کہ وہ سابق سفیر شوکت علی مقدم کی صاحب زادی کے قتل کی مذمت کرتے ہیں، اور حکومت سے مطالبہ ہے کہ مس نور کے قاتل کو مثالی سزا دی جائے، ایسوسی ایشن کو خدشہ ہے کہ مجرم دہری شہریت کا فائدہ اٹھا کر فرار نہ ہو جائے۔

سابق سفرا نے کہا ہے کہ پولیس اور پراسیکیوٹر مجرم کا پورا طبی اور مجرمانہ ریکارڈ سامنے لائے، اس کیس کی نگرانی خواتین کے خلاف کرائم کی ہائی شرح میں کمی کا باعث بنے گی۔