تازہ تر ین

مقبو ضہ کشمیر سیکڑوں خواتین بچوں کو جنم دیتے دنیا سے رخصت

سرینگر (خصوصی رپورٹ) مقبوضہ وادی میں کرفیو کے باعث عائد غیر قانونی پابندیوں کی وجہ سے اب تک سینکڑوں خواتین بچوں کو جنم دیتے زندگی کی بازی ہار چکی ہیں۔ وادی میں تمام سرکاری ہسپتال عملی طور پر بند پڑے ہیں۔ کرفیو کے باعث کاروباری اداروں کے ساتھ نجی کلینک بھی بند ہیں۔ جس وجہ سے مریضوں خاص طور پر خواتین کو شدید تکلیف کا سامنا ہے حاملہ خواتین گھروں وضع حمل کیلئے تڑپتی رہتی ہیں۔ دیسی ٹوٹکوں کے ذریعے دایہ سے علاج کرانا بھی ممکن نہیں کہ نہ کوئی گھر سے نکل کر دائی کو بلا سکتی ہے نہ دایہ آ سکتی ہے خاص طور پر وہ خواتین جن کے کیس پیچیدہ ہوتے ہیں وہ کئی کئی روز تکلیف سے تڑپنے کے بعد جان دے دیتی ہیں جبکہ بچے بھی پیٹ میں ہی دم توڑ دیتے ہیں اور اگر وضع حمل ہوتا بھی ہے تو پیچیدگی کی وجہ سے بچے بھی پیٹ میں ہی یا پیدائش کے فوری بعد دم توڑ دیتے ہیں سینکڑوں نومولود دنیا میں آنے سے پہلے یا دنیا میں آتے ہی جان دے رہے ہیں۔ انسانی حقوق کی تنظیموں نے صورتحال پر گہری تشویش کا اظہار کیا ہے اور جاں بلب مریضوں کو ہسپتال میں علاج معالجہ کی سہولت فراہم کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔


اہم خبریں
   پاکستان       انٹر نیشنل          کھیل         شوبز          بزنس          سائنس و ٹیکنالوجی         دلچسپ و عجیب         صحت        کالم     
Copyright © 2016 All Rights Reserved