تازہ تر ین

لگتا ہے الیکشن کمیشن آئین سے نہیں کہیں اور سے ہدایات لے رہا ہے، جسٹس عیسیٰ

سپریم کورٹ کے جسٹس قاضی فائز عیسیٰ نے بلدیاتی انتخابات نہ کرانے سے متعلق کیس کی سماعت کے دوران ریمارکس دیے ہیں کہ آئین پر عملدرآمد میں رکاوٹ ڈالنے والے سنگین غداری کے مرتکب ہو رہے ہیں، لگتا ہے الیکشن کمیشن آئین سے نہیں کہیں اور سے ہدایات لے رہا ہے۔

سپریم کورٹ میں جسٹس قاضی فائز عیسیٰ کی سربراہی میں جسٹس مقبول باقر پر مشتمل 2 رکنی بینچ نے خیبرپختونخوا میں بلدیاتی انتخابات نہ کرانے سے متعلق درخواست پر سماعت کی، اس دوران صوبائی حکام سمیت دیگر افراد عدالت میں پیش ہوئے۔

سماعت کے دوران جسٹس قاضی فائز عیسیٰ نے پوچھا کہ اٹارنی جنرل کہاں ہیں؟ کہ اٹارنی جنرل اگر وزیراعظم کے ساتھ ہیں تو انہیں بتائیں کہ آئین زیادہ اہم ہے۔

ساتھ ہی عدالت نے چیف الیکشن کمشنر اور الیکشن کمیشن کے اراکین، اٹارنی جنرل برائے پاکستان کو فوری طور پر عدالت طلب کرلیا۔

بعد ازاں عدالت نے طلب کرنے پر اٹارنی جنرل، چیف الیکشن کمشنر اور دیگر اراکین سپریم کورٹ پہنچے، اسی دوران جسٹس قاضی فائز عیسیٰ نے اپنے ریمارکس میں کہا کہ لگتا ہے جمہوریت اب ترجیح ہی نہیں رہی۔

اس پر اٹارنی جنرل نے کہا کہ جمہوریت ہی اولین ترجیح ہے، جس پر جسٹس قاضی فائز عیسیٰ نے کہا کہ چیف الیکشن کمشنر موجود ہیں، انہیں ان کا حلف یاد کروانا چاہتے ہیں۔

جسٹس قاضی فائز عیسیٰ نے کہا کہ بلدیاتی انتخابات کیوں نہیں کرائے جارہے، عوام کو جمہوریت سے کیوں محروم رکھا جارہا ہے، بلدیاتی انتخابات نہ کرا کر سپریم کورٹ کے حکم کی خلاف ورزی ہورہی ہے۔

انہوں نے کہا کہ کیا چیف الیکشن کمشنر اور اراکین نے اپنا حلف نہیں دیکھا، کیا چیف الیکشن کمشنر نے آئین نہیں پڑھا۔

جسٹس قاضی فائز عیسیٰ نے کہا کہ عدالت نے صوبے میں بلدیاتی انتخابات کا حکم دیا تھا، کیا آپ نے بلدیاتی انتخابات کے بارے میں حکومت کو آگاہ کیا، کیا معاملہ کابینہ کے سامنے لایا گیا؟

اس پر اٹارنی جنرل نے کہا کہ معاملہ کابینہ کے سامنے رکھنے کی ضرورت نہیں، میرے مشورے پر ہی حکومت نے میئر اسلام آباد سے متعلق نوٹیفکیشن واپس لیا تھا۔

جس پر جسٹس قاضی فائز عیسیٰ نے کہا کہ عدالت چاہتی ہے کہ ہر ایک اپنی آئینی ذمہ داری پوری کرے۔

سماعت کے دوران چیف الیکشن کمشنر نے بتایا کہ پنجاب حکومت نے بلدیاتی حکومتوں کو تحلیل کر دیا تھا، جس پر جسٹس قاضی فائز عیسیٰ نے پوچھا کہ کیا صوبائی حکومت کا بلدیاتی حکومتیں تحلیل کرنا قانونی تھا؟ جس پر چیف الیکشن کمشنر نے کہا کہ پنجاب کی حکومت کا اقدام غیرقانونی تھا۔


اہم خبریں
   پاکستان       انٹر نیشنل          کھیل         شوبز          بزنس          سائنس و ٹیکنالوجی         دلچسپ و عجیب         صحت        کالم     
Copyright © 2016 All Rights Reserved