تازہ تر ین

بلوکی پاور پلانٹ کا دورہ …. کالا باغ ڈیم کی تعمیر بارے بھی اہم خبر

لاہور، پتوکی، چھانگا مانگا (اپنے سٹاف رپورٹر سے، نمائندگان خبریں) وزیراعلیٰ پنجاب محمد شہبازشریف نے بلوکی مےں 1223 مےگاواٹ کے گیس پاور پلانٹ کا دورہ کیا۔ وزےراعلیٰ نے زےر تعمےر گےس پاور پلانٹ کے مختلف حصے دےکھے اور منصوبے پر کام کی رفتار کو سراہا۔ وزےراعلیٰ نے پلانٹ کے معائنے کے بعد مےڈےا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ وہ وقت دور نہےںجب مخالفےن بھی ہمارے توانائی منصوبوں کی تعرےف کرنے پر مجبور ہو جائےں گے کےونکہ وزےراعظم محمد نوازشرےف کی قےادت مےں مسلم لےگ (ن) کی حکومت نے توانائی منصوبوں مےں رفتار ،شفافےت اوربچت کے جو اعلیٰ معےار قائم کےے ہےں ان کی عالمی سطح پر مثال نہےں ملتی۔سب سے پہلے پاکستان کا نعرہ لگانے والے ڈکٹےٹر مشرف کو داسو اور بھاشا ڈےم بنانے کا خےال کےوں نہےں آےا؟مشرف نے توانائی کے حوالے سے پاکستان کو ناقابل تلافی نقصان پہنچاےا۔ محرومیوں کے خاتمے اور ملک کی ترقی کیلئے وزیراعظم کی قیادت میں دن رات کام جاری ہے۔ ماضی کے حکمرانوں نے قوم اور ملک کا بیڑا غرق کےا اور ماضی میں ملکی وسائل کو دونوں ہاتھوں سے لوٹا گیا۔سب سے پہلے پاکستان کا نعرہ لگانے والے ڈکٹیٹر نے ملک کو ناقابل تلافی نقصان پہنچایا۔ماضی کے حکمرانوں نے قوم کو سرنگوں کیا اور ہم سرخرو کریں گے۔ ہم جانتے ہےں کہ پاکستان کی قسمت بجلی کے منصوبوں سے جڑی ہوئی ہے اوربجلی کے منصوبوں مےں تےزی کےلئے انجےنئرز کی منت سماجت مےرے لئے باعث عار نہےں۔ مےں اس قوم کےلئے سب کچھ کرنے کےلئے تےار ہوں ۔انہوںنے کہا کہ وفاقی اورپنجاب حکومت بلوکی،حوےلی بہادرشاہ اوربھکی مےں اپنے وسائل سے 3600مےگاواٹ کے گےس پاور پلانٹس لگارہی ہےں اور ےہ تےنوں بجلی کے منصوبے صرف 27ماہ مےں مکمل ہوجائےں گے جبکہ ماضی مےں پاکستان کے اندر اس طرح کے منصوبے 60ماہ مےں بھی مکمل نہےں ہوتے تھے ۔پاکستان کی 70سالہ تارےخ مےں ےہ اےک رےکارڈ ہو گا کہ کوئی منصوبہ بغےر اضافی اخراجات اور مقررہ مدت مےں مکمل ہو گا۔ یہ اسی طرح ممکن ہوا ہے کہ تمام لوگوں نے دن رات محنت کی اور جانفشانی کے ساتھ کام کیا۔ پاکستان کے اندر گدو پاور پلانٹ منصوبہ 60 مہینوں میں مکمل ہوا لیکن بلوکی گیس پاور پلانٹ 27 ماہ کی ریکارڈ مدت میں مکمل ہو جائے گا۔ بلوکی پاور پلانٹ کے منصوبے پر جس تےز رفتاری سے کام جاری ہے اس کی نظےر نہےں ملتی ۔منصوبے پر ہزاروں انجےنئرز اور محنت کش کام کر رہے ہےں ۔جنرےٹرز کی تنصےب مکمل ہوچکی ہے جبکہ مارچ مےں ٹربائنز بھی آجائیں گی۔جولائی مےں پہلی اور اگست مےں دوسری ٹربائن چلے گی جس سے مجموعی طور پر 750مےگاواٹ بجلی نےشنل گرڈ مےں شامل ہو گی جبکہ جنوری 2018ءمےں ےہ منصوبہ پاکستان کی ترقی اور خوشحالی کےلئے 1223مےگاواٹ بجلی مہےا کر رہا ہوگا۔ موجودہ حکومت نے 2014ءکے دھرنے اور 2016ءکے لاک ڈاو¿ن کے باوجود بجلی کے منصوبوں کو تےزی سے آگے بڑھاےا ہے ۔اگرچہ دھرنوں اورلاک ڈاو¿ن سے ملک مےں ہےجانی کےفےت پےدا ہوئی اور قوم کا قےمتی وقت ضائع کےا گےا لےکن اس کے باوجود ہم بجلی منصوبوں کو آگے بڑھاتے گئے ہےں اور رواں برس کے اختتام تک توانائی منصوبوں کی تکمےل سے بجلی کی بنا پر اندھےرے ختم ہو جائےں گے اور ہر طرف اجالا ہوگا اور لوڈ شےڈنگ ختم ہو گی۔ اس طرح ماضی کی کئی دہائےوں کا بوجھ قصہ پارےنہ بن جائے گا۔ زراعت،صنعت ،تعلےم ،صحت اوردےگر شعبوں کےلئے وافر بجلی دستےاب ہوگی۔ےہ وزےراعظم محمد نوازشرےف کی قےادت مےں موجودہ حکومت کا بہت بڑا کرےڈٹ ہے جبکہ سی پےک کے تحت توانائی کے منصوبے اس کے علاوہ ہےں جس مےں 1320 مےگا واٹ کے ساہےوال کول پاور پراجےکٹ پر اتنی تےزی سے کام ہورہا ہے کہ ےہ منصوبہ مقررہ مدت 25دسمبر2017ءکی بجائے جون 2017ءمےں مکمل ہوجائے گا۔ مےں ملک و قوم کےلئے بجلی کے منصوبوں کی تےزی سے تکمےل کی خاطر منصوبوں پر کا م کرنے والوں کی منت سماجت کرنا کوئی عار نہےں سمجھتا کےونکہ مےرا ےہ اقدام صرف اور صرف اس قوم کےلئے ہے۔انہوںنے کہاکہ وزیراعظم کی قیادت میں گیس کے ان منصوبوں میں 112ارب روپے کی بچت کی گئی ہے اور ملک کی تاریخ میں کوئی اور مثال نہیں ملتی جبکہ صرف بلوکی کے منصوبے مےں 40ارب روپے کی بچت کی گئی ہے ۔یہ بھی حسن اتفاق ہے کہ چین کی کمپنی ہاربن انٹرنیشنل او رامریکن کمپنی جنرل الیکٹرک نے گدو پاور پلانٹ 8لاکھ 34ہزار ڈالر فی میگاواٹ کے حساب سے لگایا تھا اور آج ےہی کمپنیاں بلوکی میں گیس کی بنیاد پر 4لاکھ 69ہزار ڈالر فی میگا واٹ سے منصوبہ لگا رہی ہےں جو اس بات کا ثبوت ہے کہ ان کمپنیوں اور سرمایہ کارو ںکو وزیراعظم محمد نوازشریف کی قیادت پر مکمل اعتماد ہے بلکہ تمام امور انتہائی شفاف اور پیشہ ورانہ اندازمیں طے ہوتے ہیں۔ حکومت کی شفاف پالیسی کی بدولت ہی یہ کمپنیاں اتنی کم قیمت پر بجلی کے منصوبے لگانے پر مجبور ہوئی ہےں۔ وزیراعظم محمد نوازشریف نے شفافیت اور اعلیٰ معیار کے جو سنہری اصول متعارف کرائے ہیں وہ ان کی پہچان بن چکے ہےں۔ پاور پلانٹ پر 3 ہزار سے زائد انجینئرز اور ورکرز کام کر رہے ہیں۔پاور پلانٹ کے آپریشنل ہونے سے گرمیوں میں لوڈشیڈنگ 2 گھنٹے کم ہوگی۔ دنیا کی جدید ترین ٹیکنالوجی کی حامل گیس ٹربائنز لگائی جا رہی ہیں۔ ایندھن کی مد میں سالانہ 7 ارب روپے کی بچت ہوگی اور صارفین کو سستی بجلی ملے گی۔انہوںنے کہا کہ 70 برس مےں توانائی منصوبوں کے نام پر قوم سے سنگےن مذاق کےاگےا ہے۔ نےلم جہلم ہائےڈرو پاورپراجےکٹ کا بےڑا غرق کےا گےا۔ ماضی کے حکمرانوں نے قومی دولت کو بے دردی سے لوٹا۔ 985 مےگاواٹ کے نےلم جہلم پراجےکٹ کو 2003ءمےں اس وقت کے ڈکٹےٹر جنرل مشرف نے شروع کےا اورابھی تک ےہ منصوبہ نامکمل ہے ۔غرےب قوم کے اس پرساڑھے چار ارب ڈالر لگ رہے ہےں ۔ ےہ سب کےا دھرا اس ڈکٹےٹر کا ہے جو مکا دکھا کر کہتا تھا کہ سب سے پہلے پاکستان۔وزےراعظم محمد نوازشرےف نے بھی نےلم جہلم پاور پراجےکٹ مےں تاخےر پر ناراضگی کا اظہار کےا ہے تاہم موجودہ چےئرمےن واپڈا نے ےہ منصوبہ 2018ءکے شروع مےں مکمل کرنے کی ےقےن دہانی کرائی ہے۔ 1223 مےگاواٹ کے بلوکی گےس پاور پلانٹ منصوبے پر 562ملےن ڈالرخرچ آرہا ہے جبکہ نےلم جہلم پر ساڑھے چار ارب ڈالر خرچ ہورہے ہےں۔ہمارے دور مےں ترقےاتی منصوبے انتہائی تےزرفتاری سے مکمل ہورہے ہےں اورقومےں اس طرح بنتی ہےں۔ماضی مےں لوٹ مار کے ذرےعے قوم کو تباہ کےاگےا۔ہمارے دور مےں قوم سرخرو ہو رہی ہے جبکہ ماضی مےں اس کو سرنگوں کےا گےا۔ ہمارے دور مےں قوم آگے بڑھ رہی ہے جبکہ ماضی مےں اس کو پےچھے کی طرف دھکےلا گےا ۔70ءبرس کی تارےخ اٹھا لےں تو دل خون کے آنسو روتا ہے ۔وزےراعلیٰ نے بلوکی گےس پاور پلانٹ پر کام کرنے والے انجےنئرز اورمحنت کشوں کو شاباش دےتے ہوئے کہا کہ آپ ملک کی تعمےر وخوشحالی کے منصوبے کے کارکن ہےں۔تارےخ مےں آپ کا نام سنہری حروف مےں لکھا جائے گا۔مےری آپ کو تلقےن ہے کہ آپ محنت سے کام کرےں ۔انشاءاللہ ےہ منصوبہ مکمل ہوگا تو وزےراعظم خود آپ کو آکر شاباش اور انعام دےںگے جبکہ پنجاب حکومت بھی آپ کی حوصلہ افزائی کرتے ہوئے انعام دے گی ۔وزےراعلیٰ نے منصوبے کے چےف اےگزےکٹو آفےسر راشدمحمود لنگڑےال، ای پی سی کنٹرےکٹر چےنی کمپنی اور کنسلٹنٹ کو بھی مبارکباد دی۔مےڈےا کے سوالات کے جواب مےں وزےراعلیٰ نے کہا کہ نےازی صاحب کے دھرنوں اوراحتجاجی سےاست سے ملک و قوم کو بے پناہ نقصان پہنچا ہے ۔پاناما کےس عدالت عظمیٰ مےں ہے اور ہم عدالت عظمیٰ اوراس کے فےصلوں کا احترام کرتے ہےں۔نےازی صاحب کی طرح نہےں کہ فےصلہ حق مےں آےا توسابق چےف جسٹس افتخار چوہدری بہت اچھے، خلاف آگےا تو برے ۔ عدالتی فےصلوں کا سب کواحترام کرنا چاہےے،نےازی صاحب کی طرح نہےں کہ فےصلہ حق مےں آےا توٹھےک ، خلاف آےا تو نا منظور۔نےازی صاحب کا ےہ روےہ انصاف کی دھجےاں اڑانے کے مترادف ہے ۔جس قوم کو انصاف مل رہا ہووہ کبھی ہارا نہےں کرتیں۔اےک اور سوال کے جواب مےں انہوںنے کہا کہ پن بجلی کے منصوبے بھی ملک کی ترقی وخوشحالی کے لئے اہم ہےں ۔ماضی مےں ڈکٹےٹر مشرف نے داسو ڈےم اوربھاشا ڈےم کےوں نہےں بناےا حالانکہ وہ نعرہ سب سے پہلے پاکستان کا لگاتے تھے ۔وزےراعظم نوازشرےف کو ےہ کرےڈٹ جاتا ہے کہ چار ہزار مےگاواٹ کے داسو ڈےم پر کام شروع ہوگےا ہے جبکہ بھاشا ڈےم کے لئے اراضی حاصل کرلی گئی ہے ۔انہوںنے کہا کہ بلوکی گےس پاور پلانٹ مےں جو ٹربائنز لگائی جارہی ہےں ان کی استعداد کار دنےا مےں سب سے زےادہ ہے۔اےک اور سوال کے جواب مےں انہوںنے کہا کہ وزےراعظم محمد نوازشرےف نے اےک بار کالاباغ ڈےم بنانے کا فےصلہ کےاتھا اگرچہ ےہ اےک قابل عمل منصوبہ ہے اوراس کی افادےت سے انکارنہےں کےاجاسکتا لےکن جب تک پوری قوم ےکسونہےں ہوگی اورچاروں بھائی متفق نہےں ہوں گے تو اس پر کام شروع کرنا پاکستان کی ےکجہتی کے خلاف ہے ۔کالاباغ ڈےم کے منصوبے پر صوبے اختلاف رکھتے ہےںاورےہ بھی ڈکٹےٹر شپ کا اےک تحفہ ہے ۔ انہوںنے کہاکہ کالاباغ ڈےم کے منصوبے پر چاروں صوبوں کا اتفاق انتہائی ضروری ہے ۔ماضی کے حکمرانوں نے داسو اور بھاشا ڈےم پر بھی توجہ نہےں دی۔اےک اورسوال کے جواب مےں وزےراعلیٰ نے کہا کہ نےلم جہلم کی طرح نندی پور پاور پراجےکٹ بھی ماضی کے حکمرانوں کی لوٹ مار کی داستان سناتا ہے لےکن اب ےہ منصوبہ بجلی پےدا کررہا ہے ۔اگر ہماری حکومت اس منصوبے کو آپرےشنل نہ کرتی تو غرےب قوم کے 33ارب روپے کھائے جاتے ۔ انہوںنے کہا کہبلوکی پاور پلانٹ کی تنصیب سے 4لاکھ گھرانوں کی بجلی کی ضروریات پوری ہوں گی ا ور 2کروڑ آبادی کے تمام گھرانے مستفید ہوں گے- نیشنل پاور پارکس پراجیکٹ کے چیف ایگزیکٹو آفیسر راشد محمود لنگڑےال نے وزےراعلیٰ کو منصوبے پر ہونے والی پےش رفت سے آگاہ کےا اوراس ضمن مےں برےفنگ دی۔صوبائی وزےر صنعت شےخ علاو¿الدےن،اراکےن اسمبلی اورمتعلقہ حکام بھی اس موقع پر موجود تھے۔وزیراعلیٰ پنجاب محمد شہبازشریف نے صوبے میں صحت مندانہ سرگرمیوں کے فروغ کیلئے مختلف کھیلوں کے مقابلوں کے انعقاد اور اس ضمن میں تحصیل، ضلع ، ڈویژن اور صوبائی سطح پر کھیلوں کے مقابلے منعقد کرانے کیلئے جامع پلان مرتب کرنے کی ہدایت کی ہے۔ انہوں نے ”خادم پنجاب سپورٹس ٹیلنٹ ہنٹ پروگرام“ بھی رواں برس شروع کرنے کی ہدایت کرتے ہوئے کہا کہ اس اقدام سے نیا ٹیلنٹ ابھر کر سامنے آئے گا اور نوجوان کھلاڑیوں کی حوصلہ افزائی ہو گی۔ صوبے میں نوجوانوں کےلئے صحت مندانہ سرگرمیوں کے فروغ کے حوالے سے اعلیٰ سطح کے اجلاس کی صدارت کر رہے تھے جس میں کھیلوں کے فروغ، کھیلوںکے مقابلوں او رمیدانوں کے حوالے سے مختلف تجاویز کا جائزہ لیا گیا۔ وزیراعلیٰ محمد شہبازشریف نے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ نصابی سرگرمیوں کےساتھ ساتھ ہم نصابی سرگرمیوں کا فروغ بھی وقت کی اہم ترین ضرورت ہے اور حکومت اس مقصد کیلئے جامع پروگرام پر عمل پیرا ہے۔ صوبہ بھر میں کھیلوں کے مقابلے منعقد کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے اور یہ مقابلے تحصیل، ضلع، ڈویژن اور صوبائی سطح پر منعقد کرائے جائیں گے اور نمایاں کارکردگی کا مظاہرہ کرنے والے نوجوانوں کو پوزیشن ہولڈرز طلبا و طالبات کی طرز پر نقد انعامات اورسرٹیفکیٹس دیئے جائیں گے۔ انہوں نے کہا کہ نوجوان ہمارا قیمتی اثاثہ ہیں، انہیں تعلیم کے زیور سے آراستہ کرنے کےساتھ ساتھ کھیلوں کے میدان میں بھی آگے لانا ہے اور ان کی بھرپور حوصلہ افزائی کرنی ہے۔ وزیراعلیٰ پنجاب محمد شہبازشریف سے لاہور میٹرو پولیٹن کارپوریشن کے لارڈمیئر کرنل (ر) مبشر جاوید نے ملاقات کی۔ وزیر اعلیٰ نے ملاقات کے دوران گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ بلدیاتی حکومتوں کا قیام شہریوں کے نچلی سطح پر مسائل کے حل میں ممدو معاون ثابت ہو گا اور بلدیاتی ادارے عوامی مسائل کے حل میں مو¿ثر کردار ادا کریں گے۔ وزیر اعلیٰ نے کہا کہ بلدیاتی نمائندوں کے منصب کا تقاضا ہے کہ وہ خدمت، محنت اور دیانت کو شعار بنائیں۔انہوں نے کہا کہ عوام کی بے لوث خدمت اور ان کے مسائل کا حل بلدیاتی نمائندگان کی اولین ترجیح ہونی چاہیئے کیونکہ خدمت، محنت اور دیانت کو اپنا کر ہی شہریوں کی توقعات پر پورا اترا جاسکتا ہے۔وزیراعلیٰ پنجاب محمد شہباز شریف نے پٹیالہ گھرانے کے معروف کلاسیکل گلوکار استاد فتح علی خان کے انتقال پر گہر ے دکھ اور افسوس کا اظہارکیا ہے – وزیر اعلی نے کہا کہ استا د فتح علی خان کی وفات سے کلاسیکل موسیقی میں جو خلاپیدا ہوا ہے وہ کبھی پر نہیں ہو گا۔ وزیر اعلیٰ پنجاب محمد شہباز شریف نے شیخوپورہ میں ایک تقریب کے دوران ہوائی فائرنگ کے حوالے سے میڈیا پر نشر ہونے والی خبر کا نوٹس لیتے ہوئے ڈی پی او شیخوپورہ سے رپورٹ طلب کر لی ہے۔ وزیر اعلیٰ نے فائرنگ کے واقعہ میں ملوث ملزمان کی فوری گرفتاری کا حکم دیتے ہوئے کہا ہے کہ ہوائی فائرنگ کرنے والے افراد کے خلاف قانون کے مطابق کارروائی کی جائے۔


اہم خبریں





دلچسپ و عجیب
کالم
   پاکستان       انٹر نیشنل          کھیل         شوبز          بزنس          سائنس و ٹیکنالوجی         دلچسپ و عجیب         صحت        کالم     
Copyright © 2021 All Rights Reserved Dailykhabrain