تازہ تر ین

اقامہ رکھنے والے بھی پکڑ میں آئینگے

اسلام آباد (این این آئی‘ مانیٹرنگ ڈیسک) وزیر اعظم عمران خان نے کہا ہے کہ ملک کو دیوالیہ ہونے سے بچا لیا ہے، اب معیشت ٹیک آف کریگی، تحقیقاتی کمیشن جلد قائم کیا جائیگا جو اقامہ رکھنے والوں کا بھی حساب کریگا، گرفتار ہونے والے این آر او کی تلاش میں ہیں مگر کسی صورت این آر نہیں دونگا۔ ہفتہ کو وزیراعظم عمران خان کی زیر صدارت بنی گالا میں سینئر پارٹی رہنما?ں کا اجلاس ہوا جس میں جہانگیرترین، نعیم الحق، حفیظ شیخ، چیئر مین ایف بی آر شبر زیدی، فردوس عاشق اعوان اعجاز چوہدری سمیت پارٹی رہنما شریک ہوئے۔ اجلاس میں وفاقی و صوبائی بجٹ کے بعد صورتحال اور حکومتی اقدامات کا جائزہ لیا گیا۔ ملکی سیاسی صورتحال میں پارٹی کا بیانیہ کیا ہونا ہوگا، وزیر اعظم نے پارٹی رہنماوں کو آگاہ کردیا۔ ذرائع کے مطابق اجلاس میں وزیر اعظم کے تحقیقاتی کمیشن سے متعلق بریفنگ دی گئی۔ ذرائع نے بتایا کہ مشیر خزانہ حفیظ شیخ نے بجٹ اور حکومتی اہداف سے متعلق آگاہ کیا۔ ذرائع کے مطابق چیئرمین ایف بی آرشبر زیدی نے ٹیکس اصلاحات اور اہداف سے متعلق اقدامات پر بریف کیا۔ ذرائع کے مطابق جہانگیر ترین نے اجلاس میں زراعت پالیسی سے متعلق پیش رفت پر بریفنگ دی۔ ذرائع کے مطابق وزیر اعظم نے کہا کہ تحقیقاتی کمیشن کا مقصد24 ہزار ارب قرضوں کا حساب ہے، تحقیقاتی کمیشن جلد قائم کیا جائےگا۔ انہوں نے کہا کہ تحقیقاتی کمیشن اقامہ رکھنے والوں کا حساب بھی کرے گا۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان کی معیشت مستحکم ہو چکی ہے۔ ذرائع کے مطابق وزیر اعظم نے کہا کہ اب وقت ہے معیشت ٹیک آف کرےگی، کٹھن راستہ تھا جو طے کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ملک کو دیوالیہ ہونے سے بچا لیا ہے، پاکستان کی تاریخ کا سب سے بڑا سود دے رہے ہیں۔ انہوںنے کہا کہ 30 فیصد کرنٹ اکا?نٹ خسارہ میں کمی آئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ملک کے 4ہزار ریونیو میں سے 2ہزار قرض میں جاتا ہے ذرائع کے مطابق اجلاس میں احساس اور غربت خاتمہ پروگرام پر بھی بات کی گئی۔ وزیر اعظم نے کہاکہ احساس پروگرام کا بجٹ 100 ارب سے بڑھا کر 191 ارب تک لے گئے ہیں۔ عمران خان نے کہاکہ عوام کو غربت کی لکیر سے اوپر لانا پی ٹی آئی کی اولین ترجیح ہے۔ ذرائع کے مطابق اجلاس میں اپوزیشن گرفتاریوں پر بھی بات چیت کی گئی۔ وزیر اعظم نے کہا کہ گرفتار ہونے والے این آر او کی تلاش میں ہیں مگر کسی صورت این آر نہیں دونگا۔ اجلاس کے دوران احساس اور غربت خاتمہ پروگرام پر بھی بات کی گئی۔ مشیر خزانہ عبد الحفیظ شیخ نے بجٹ اور حکومتی اہداف سے متعلق آگاہ کیا، چیئرمین ایف بی آر شبر زیدی نے ٹیکس اصلاحات اور اہداف پر بریفنگ دی، اجلاس کے دوران جہانگیر ترین نے بھی زراعت کے حوالے سے بریفنگ دی۔ اجلاس کے دوران وزیراعظم عمران خان کا کہنا تھا کہ قرضوں کی تحقیقات کیلئے کمیشن جلد قائم کیا جائے گا۔ تحقیقاتی کمیشن کا مقصد 24 ہزار ارب کے قرضوں کی تحقیقات کرنا ہے، ملکی معیشت مستحکم ہو چکی ہے، کٹھن راستہ طے کر لیا، کرنٹ اکاونٹ خسارے میں 30 فیصد کمی آئی ہے۔ 4ہزار ریونیو میں سے دو ہزار قرض کی صورت میں چلا جاتا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ عوام کو غربت کی لکیر سے اوپر لانا پاکستان تحریک انصاف کی حکومت کی ترجیح ہے۔ احساس پروگرام کا بجٹ 100ارب سے بڑھا کر 191ارب روپے تک لے گئے ہیں۔ وزیر اعظم عمران خان کی زیر صدارت ٹاسک فورس برائے صحت کا اجلاس ہوا جس میں صحت سے متعلق معاملات زیر غور آئے۔ ہفتہ کو جاری بیان کے مطابق وزیر اعظم عمران خان کی زیر صدارت ٹاسک فورس برائے صحت کا اجلاس ہوا جس میں صحت سے متعلقہ معاملات زیر غور آئے۔


اہم خبریں
   پاکستان       انٹر نیشنل          کھیل         شوبز          بزنس          سائنس و ٹیکنالوجی         دلچسپ و عجیب         صحت        کالم     
Copyright © 2016 All Rights Reserved