تازہ تر ین

پاکستان میں کرونا چین سے مختلف معروف سائنسدان ڈاکٹر عطاءالرحمان کا دعویٰ

اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک) چیئرمین وزیراعظم ٹاسک فورس برائے سائنس اینڈ ٹیکنالوجی ڈاکٹر عطاءالرحمان نے کہا ہے کہ کراچی یونیورسٹی میں کرونا سے متعلق تحقیق کی گئی ہے۔ چین میں پایا جانے والا کرونا پاکستان میں پائے جانے والے وائرس سے مختلف ہے۔ پاکستان میں وائرس کی ساخت میں کچھ جگہ تبدیلی ہے۔ پلازما ٹرانسفیوژن سے متعلق مشاہدہ جاری ہے۔ چین میں بھی پلازما ٹرانسفیوژن پر مشاہدہ کیا گیا۔ کرونا ابھی بڑھ رہا ہے۔ لوگوں کو تھوڑا صبر کرنا ہوگا۔ حکومتی ہدایات پر بڑی حکمت عملی کے ساتھ چل رہے ہیں۔ مکمل لاک ڈاﺅن نہیں کیا بلکہ احتیاط سے خاص طریقے کے ساتھ لاک ڈاﺅن کیا۔ مکمل لاک ڈاﺅن اس لیے ممکن نہیں کہ 8، 10 کروڑ غریب ہیں۔ وزیراعظم نے ٹھیک کہا کہ سوچ سمجھ کر چلنا ہے۔ سیاسی جماعتوں کے کہنے پر مکمل لاک ڈاﺅن کیا تو افراتفری کا ماحول بن سکتا ہے۔ لوگ ایک دوسرے سے دور رہیں چاہے دکان پر ہوں یا فیکٹری میں یا کسی اور جگہ ہوں۔ ابھی تین سے چار ماہ تک ماسک، دستانے پہننا اور سینیٹائزر استعمال کرنا لازمی ہوگا چاہے لاک ڈاﺅن ہو یا نہ ہو۔ ان کا کہنا تھا کہ پلازما ٹرانسفیوژن سے متعلق ابھی مشاہدہ جاری ہے۔ چین میں بھی پلازما ٹرانسفیوژن پر مشاہدہ کیا گیا جبکہ عالمی سطح پر پلازما ٹرانسفیوژن کو مکمل طور پر استعمال نہیں کیا گیا۔ ڈاکٹر عطاءالرحمان نے بتایا کہ پاکستان میں کرونا وائرس سے اموات کا ڈیٹا دنیا سے مختلف ہے۔ پاکستان میں کرونا وائرس سے متعلق اب تک ڈیٹا حوصلہ افزا ہے۔ ملک میں اس وقت تعداد بڑھ رہی ہے مگر تھوڑا انتظار کرنا پڑے گا۔ گراف جب نیچے آنا شروع ہو گا تو تعداد سے متعلق درست معلوم ہو سکے گا۔ ان کا کہنا تھا کہ سماجی فاصلے تو ہمیں ہر صورت رکھنا ہیں۔ تین، چار ماہ ہمیں سختی سے ماسک اور سینیٹائزر کا استعمال کرنا ہے۔


اہم خبریں




دلچسپ و عجیب
کالم
   پاکستان       انٹر نیشنل          کھیل         شوبز          بزنس          سائنس و ٹیکنالوجی         دلچسپ و عجیب         صحت        کالم     
Copyright © 2016 All Rights Reserved