سوشل میڈیا پر زہر اگلنے والا گستاخ جہنم واصل

نئی دہلی(مانیٹرنگ ڈیسک) اسلام کے خلاف غیرمسلم تو پراپیگنڈہ کرتے ہی رہتے ہیں، کچھ نام نہاد مسلمان بھی شہرت اور دولت کے لالچ میں اس خباثت کا ارتکاب کرگزرتے ہیں اور پھر دنیا میں ہی عبرتناک انجام سے دوچار ہوتے ہیں۔ ہر مسلمان کی خواہش ہوتی ہے کہ اس کا انجام بالخیرو ایمان ہو لیکن اگر وہ اپنے ہی مذہب کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے ہلاک ہوجائے تویقیناًاسے ایک اچھی موت تصور نہیں کی جائے گا۔بھارت میں ایسے ہی ایک ملحد اور گستاخ نوجوان کو مشتعل مسلمانوں کے ایک گروہ نے موت کے گھاٹ اتار دیا ہے۔ ٹائمز آف انڈیا کی رپورٹ کے مطابق 31سالہ فاروق نامی یہ شخص سا?تھ اکاڈیم کا رہائشی تھا جوسرے سے خدا کے وجود سے ہی انکاری تھا۔ اس نے ایک واٹس ایپ گروپ بنا رکھا تھا جس پر وہ اپنے گستاخانہ خیالات کا اظہار کرتا تھا۔ اس کے علاوہ فیس بک پر بھی وہ اکثراسلام کے خلاف زہر اگلتا رہتا تھا۔ رپورٹ کے مطابق فاروق کے ان اشتعال انگیز اقدامات پر مشتعل ہو کر 4افراد نے اس پر حملہ کر کے ہلاک کر دیا۔ ان چاروں میں سے 30سالہ انساتھ نامی مسلم نوجوان نے خود کو پولیس کے حوالے کر دیا ہے۔ اس نے اعتراف کیا ہے کہ انہوں نے فاروق کو اسلام کے خلاف زہراگلنے پر قتل کیا۔ علاقے کے ڈی سی پی ایس سراوینن کا بھی کہنا تھا کہ ”فاروق کے اسلام مخالف بیانات کی وجہ سے علاقے کے مسلمان بہت مشتعل تھے۔ ممکنہ طور پر یہی اس کے قتل کی وجہ بنی۔“واقعے کی مزید تحقیقات جاری ہیں۔

سب سے زیادہ پڑھی جانے والی مقبول خبریں


دلچسپ و عجیب
کالم
آپ کی رائے
   پاکستان       انٹر نیشنل          کھیل         شوبز          بزنس          سائنس و ٹیکنالوجی         دلچسپ و عجیب         صحت        کالم     
Copyright © 2016 All Rights Reserved